عمران خان کی دہشت گردی کے مقدمے میں 20 ستمبر تک ضمانت منظور

اسلام آباد میں انسداد دہشت گردی کی عدالت

‏وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں انسداد دہشت گردی کی عدالت (اے ٹی سی) نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان کے خلاف دہشت گردی کے مقدمے میں آج ان کی ضمانت میں توسیع کردی ہے۔

کیس کی سماعت صبح 10 بجے کے قریب جج راجہ جاوید حسن عباس کی سربراہی میں شروع ہوئی تاہم عمران خان کے وکیل بابر اعوان کی جانب سے عدالت سے استدعا کی گئی کہ عمران کو ان کی گاڑی احاطے کے اندر لانے کی اجازت دی جائے، سماعت ایک گھنٹے کے لیے ملتوی کردی گئی۔

عدالت کی اجازت کے بعد عمران خان بنی گالہ میں واقع اپنی رہائش گاہ سے نکلے اور صبح 11 بجے عدالت میں پیش ہوئے۔ پی ٹی آئی رہنما اسد عمر، اعظم سواتی، فیصل جاوید اور دیگر بھی موجود تھے۔ اسپیشل پراسیکیوٹر رضوان عباسی عدالت میں پیش ہوئے۔ 

عدالت میں پی ٹی آئی کے سربراہ کا جواب

جیسے ہی کارروائی دوبارہ شروع ہوئی، ایڈووکیٹ اعوان نے سوال کیا کہ کیا عدالت میں پی ٹی آئی کے سربراہ کا جواب – جس میں انہوں نے ایک سے زیادہ جمع کرائے تھے – کو شامل نہیں کیا گیا کیونکہ یہ “نجی” تھا۔ 

انہوں نے کہا کہ اگر ضرورت پڑی تو وہ بحث کرنے کے لیے تیار ہیں اور اگر ضرورت پڑی تو نئے پراسیکیوٹر کو وقت دینے کے لیے تیار ہیں۔ 

تاہم پراسیکیوٹر نے کہا کہ عمران خان تین نوٹس جاری کیے جانے کے باوجود مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کے سامنے پیش نہیں ہوئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | یہ مائنس ون فارمولے پر عمل کرنا چاہتے ہیں، عمران خان کا دعوی

یہ بھی پڑھیں | نواز شریف اور زرداری کے ساتھ نہیں بیٹھوں گا، عمران خان

عمران خان کو نوٹس موصول ہوئے

 جج نے بابر اعوان سے پوچھا کہ کیا عمران خان کو نوٹس موصول ہوئے ہیں، جس پر انہوں نے کہا کہ دفعہ 161 میں یہ نہیں کہا گیا کہ مجرم کو پولیس کے سامنے پیش ہونا ہے۔ 

پچھلی سماعت میں بھی عدالت کے تفتیش کار نے کہا تھا کہ عمران خان پیش نہیں ہوئے، تاہم یہ کہیں نہیں لکھا کہ مجرم کو پیش ہونا ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ سابق وزیراعظم کا بیان قلمبند کیا گیا اور ریکارڈ پر نہیں لایا گیا اور کہا کہ پولیس نے عدالت میں پیش کیے گئے سپلیمنٹری میں بیان کیوں نہیں لکھا۔

عمران خان کی جان کو خطرہ

بابر اعوان نے کہا کہ پولیس نے خود کہا تھا کہ کالعدم تنظیموں سے عمران خان کی جان کو خطرہ ہے۔ اگر عمران تھانے گیا اور مارا گیا تو کیا ہوگا؟

 انہوں نے کہا کہ ہم نے پولیس کو آج صبح عدالت میں بیٹھنے اور ان کے سوالات پوچھنے کی پیشکش کی لیکن کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ انہوں نے مزید کہا کہ عدالت پولیس افسر کو ناقص تفتیش پر شوکاز نوٹس جاری کر سکتی ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔