عمران خان کا الیکشن ہونے تک سڑکوں پہ رہنے کا اعلان

سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ نئے الیکشن ہونے تک سڑکوں پر رہیں گے۔ 

 یہ بیان انہوں نے بدھ کی شب پشاور میں ایک بہت بڑے عوامی جلسے سے خطاب کے دوران دیا۔ قومی اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد کے نتیجے میں اپنی حکومت کھونے کے بعد یہ عمران خان کا پہلا عوامی جلسہ تھا۔ 

 عمران خان نے اپنے خطاب کے دوران کہا کہ وہ معزز جج صاحبان سے کچھ سوالات پوچھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ ایک بار قانون اور آئین کی بالادستی کے لیے قید ہوئے ہیں۔ میں نے اپنے 25 سالہ سیاسی کیریئر میں کبھی قانون کی خلاف ورزی نہیں کی۔ لیکن میں اپنے معزز ججوں سے پوچھتا ہوں کہ میرا جرم کیا تھا جس کی وجہ سے انہیں آدھی رات کو عدالتوں کا چکر لگانا پڑا۔ 

عمران خان نے کہا کہ پاکستانی سیاستدانوں میں سے کوئی بھی ملک پر 400 امریکی ڈرون حملوں کی مذمت نہیں کر سکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اسٹیبلشمنٹ سے پوچھنا چاہتے ہیں کہ کیا پاکستان کے جوہری ہتھیار کرپٹ مافیاز کے ہاتھ میں محفوظ ہیں؟

انہوں نے کہا کہ وہ اپنے تمام وسائل بروئے کار لائیں گے تاکہ پاکستان بھر میں لوگوں کو ملک میں “امپورٹڈ حکومت” کے خلاف متحرک کیا جا سکے۔ 

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف ایک روزہ دورے پر آج کراچی پہنچیں گے 

 عمران خان نے کہا کہ وہ حکومت کو ملک میں عام انتخابات کرانے پر مجبور کریں گے اور ان کا اعلان ہونے تک سڑکوں پر رہیں گے۔ انہوں نے ہمیشہ حمایت کرنے پر پشاور کے عوام کا شکریہ ادا کیا۔ 

انہوں نے کہا کہ جب بھی کسی وزیر اعظم کو ہٹایا جاتا تھا تو لوگ مٹھائیاں بانٹتے تھے۔ لیکن میرے معاملے میں، عوام کا ردعمل بالکل مختلف تھا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی عوام گزشتہ اتوار کو سڑکوں پر نکلے اور امریکی امپورٹڈ حکومت کو قبول کرنے سے انکار کر دیا۔ 

  انہوں نے کہا کہ ہمیں فیصلہ کرنا ہے کہ ہمیں آزادی چاہیے یا غلامی۔ ہمیں فیصلہ کرنا ہوگا کہ کیا ہم امریکہ کے غلام بنیں گے۔ ہم کبھی بھی غیر ملکی حکومت کو قبول نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ جن لوگوں نے موجودہ حکومت بنائی ان پر کرپشن کے الزامات ہیں۔  میں اس بزدل حکومت کے خلاف عوام کو متحرک کرنے کے لیے ملک کے ہر حصے میں جاؤں گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ شہباز شریف 40 ارب روپے کی کرپشن کے مقدمات کا سامنا کر رہے ہیں۔ 

 عمران خان نے امریکا کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ یہ 70 کی دہائی کا پاکستان نہیں جو چاہے کرے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایک نیا پاکستان ہے جہاں سوشل میڈیا نے لوگوں کو بااختیار بنایا ہے اور آپ ہمیں مزید ڈکٹیٹ نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ انہیں سابق ڈپٹی سپیکر قاسم سوری پر فخر ہے۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے تحریک عدم اعتماد کو مسترد کیا کیونکہ یہ ان کی حکومت کو گرانے کی امریکی حمایت یافتہ کوشش تھی۔ 

سابق وزیراعظم نے کہا کہ انہوں نے اپنی عوامی مہم کا آغاز بہادر پختونوں کی سرزمین پشاور سے کیا۔ انہوں نے کہا کہ جنرل پرویز مشرف کے افغانستان میں امریکی قیادت میں جنگ میں شامل ہونے کے بعد پختونوں کو بھاری نقصان اٹھانا پڑا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں