“صرف اسحاق ڈار ڈیلیور کر سکتا ہے” نواز شریف کا یقین

 مفتاح اسماعیل سے مکمل طور پر غیر مطمئن، سابق وزیراعظم نواز شریف کا خیال ہے کہ صرف اسحاق ڈار ہی ملک کی تباہ حال معیشت کو تقویت دے سکتے ہیں۔ 

لندن میں نواز شریف سے ملاقات

 یہ بات لندن میں نواز شریف سے ملاقات کرنے والے سینئر صحافی سہیل وڑائچ نے جیو نیوز کے پروگرام آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ میں کہی۔ 

سہیل وڑائچ نے کہا کہ سابق وزیر اعظم پی ایم ایل این کے بیانیے سے بھی غیر مطمئن ہیں کیونکہ وہ سمجھتے ہیں کہ وزیر اعظم شہباز شریف کو خود حکومت کی پالیسیوں اور مہنگائی کے اسباب کی وضاحت کے لیے عوام تک پہنچنا چاہیے۔ صحافی نے بتایا کہ نواز شریف ان خدشات سے آگاہ کرنے کے لیے شہباز شریف سے ملنا چاہتے تھے۔ 

سہیل وڑائچ نے کہا کہ اس تصور کے برعکس کہ پی ایم ایل این پی ٹی آئی کے ساتھ بات چیت کے لیے تیار ہے، نواز شریف سمجھتے ہیں کہ عمران خان کو اپنے کیے کی سزا ملنے کے بعد بات چیت ہو سکتی ہے۔ 

 نواز شریف اپنے مقدمات کی سماعت میں تاخیر کی شکایت کے لیے سپریم کورٹ کو خط لکھنے جا رہے ہیں، وہ اس بات پر افسوس کا اظہار کرنے جا رہے ہیں کہ عدالتیں رات کو دوسروں کے لیے کھل سکتی ہیں، لیکن ان کی درخواستیں سنائی نہیں دیتیں۔

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد عدالت شہباز گل کو جیل واپس بھیج دیا

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد ہائی کورٹ کا عمران خان کو نوٹس، 31 اگست کو طلب کر لیا 

سہیل وڑائچ نے مزید کہا کہ نواز کا اگلا بیانیہ اسٹیبلشمنٹ کے نہیں عدلیہ کے خلاف ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کا خیال ہے کہ قائداعظم کی طرح جیل میں ڈالے بغیر مقدمات کا سامنا کرنا چاہیے، سابق وزیر اعظم کا خیال ہے کہ جیل کا معاملہ حل ہونے کے بعد انہیں واپس آنا چاہیے۔ 

سہیل وڑائچ نے کہا کہ نواز شریف عمران خان کو وہی کاٹتے نظر آرہے ہیں جو انہوں نے بویا ہے۔ وڑائچ نے مزید کہا کہ نواز کا ماننا ہے کہ عمران ایک فاشسٹ ہے جس سے پہلے نمٹنا ہوگا جبکہ جمہوریت کے معاملات بعد میں دیکھے جا سکتے ہیں۔ 

سہیل وڑائچ نے کہا کہ نواز شریف مریم نواز سے پوری طرح مطمئن ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نواز اور مریم ایک پیج پر ہیں، شہباز کے ساتھ نہیں۔ سیاسی صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے وڑائچ نے کہا کہ نواز شریف اسٹیبلشمنٹ کی عمران خان سے لاتعلقی پر مطمئن ہیں۔ 

سہیل وڑائچ نے کہا کہ عمران کو مزاحمت اور مفاہمت کی ترکیب کرنی چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر وہ مزاحمتی موڈ میں رہے تو وہ پاور بس سے محروم ہو سکتے ہیں۔ وڑائچ نے کہا کہ عمران کی پارٹی کے کارکن جیل، پولیچ چارج اور آنسو گیس جیسی مشکلات کا سامنا کرنے کے عادی نہیں ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ حال ہی میں دو گرفتار افراد کو روتے ہوئے دیکھا گیا۔ 

 بعد ازاں نواز شریف نے لندن سے بیان جاری کرتے ہوئے واضح کیا کہ شہباز شریف سے متعلق ان سے منسوب تبصرے گمراہ کن ہیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ شہباز شریف کی کوششیں ملک کو عمران خان کے پیدا کردہ بحرانوں سے نکالیں گی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔