صحافی ایاز عامر پر لاہور میں حملہ

  گزشتہ رات سینئر صحافی ایاز امیر پر چھ نامعلوم افراد نے حملہ کیا ہے جنہوں نے جمعہ کی رات دیر گئے لاہور میں نجی ٹی وی چینل کے دفتر سے باہر آنے کے بعد ان کے ساتھ بدتمیزی کی اور ان کے کپڑے پھاڑ دئیے۔

نامعلوم افراد نے ان کی گاڑی کو روکا

تفصیلات کے مطابق ایاز عامر ایک ٹی وی پروگرام میں شرکت کے بعد گھر واپس آرہے تھے کہ نامعلوم افراد نے ان کی گاڑی کو روکا۔ حملہ آوروں نے اس کے ساتھ بدتمیزی کی اور جائے وقوعہ سے فرار ہونے سے قبل اس کے ڈرائیور کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا۔

 بعد میں ایک ٹویٹ میں ایاز عامر نے کہا کہ ان پر حملہ کرنے والوں نے ان کی عمر کی پرواہ نہیں کی۔ 

انہوں نے کہا کہ میری کسی سے کوئی ذاتی دشمنی نہیں اور نہ ہی میرا کسی سے کوئی جھگڑا ہے۔ جس نے مجھ پر حملہ کیا اس نے میری عمر کی بھی پروا نہیں کی۔ کیا یہاں جنگل کا قانون ہے؟ اگر مجھ جیسا انسان محفوظ نہیں تو عام آدمی کا کیا بنے گا؟

 سٹی پولیس کے اعلیٰ افسر بلال صدیق نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے سول لائنز پولیس سے رپورٹ طلب کر لی۔ بعد ازاں سول لائنز پولیس حکام نے عامر کا بیان ریکارڈ کیا اور سی سی ٹی وی فوٹیج کی مدد سے ملزمان کا سراغ لگانے کی یقین دہانی کرائی۔

یہ بھی پڑھیں | لوڈیشیڈنگ: کراچی میں احتجاج کے دوران تشدد سے خاتون جاں بحق  

یہ بھی پڑھیں | کرونا وائرس: ماسک پہننے کو ایک دفعہ پھر لازمی قرار دے دیا گیا  

دریں اثناء وزیراعظم شہباز شریف اور وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز نے سینئر صحافی ایاز امیر پر حملے کی شدید مذمت کی ہے۔ وزیراعظم نے واقعے کی اعلیٰ سطحی تحقیقات کا حکم بھی دیا۔

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ حملہ آوروں کو جلد انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے۔ انہوں نے امیر کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے ہدایت کی کہ صحافیوں کے تحفظ اور تحفظ کو یقینی بنایا جائے۔ 

 وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز نے بھی سینئر صحافی اور کالم نگار ایاز امیر پر تشدد کے واقعے کی مذمت کی ہے۔ انہوں نے پولیس کو ہدایت کی کہ ملزمان کو جلد گرفتار کر کے کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔ 

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے بھی ایک ٹویٹ میں سینئر صحافی ایاز امیر پر تشدد کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔ 

انہوں نے کہا کہ پاکستان صحافیوں، مخالف سیاستدانوں، شہریوں کے خلاف تشدد اور جعلی ایف آئی آر کے ساتھ بدترین قسم کی فاشزم میں اتر رہا ہے۔ جب ریاست تمام اخلاقی اختیار کھو دیتی ہے تو وہ تشدد کا سہارا لیتی ہے

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں