شہناز شیخ اب ٹی وی سیرئیل کیوں نہیں دیکھتیں؟

 مشہور ٹی وی اداکارہ شہناز شیخ جنہوں نے 1980 کی دہائی میں آنکہی کی ثنا مراد اور تنہائیاں میں زارا کا کردار ادا کیا تھا اور اس وقت گھر کا نام تھا، اب ٹی وی سیریل نہیں دیکھتے۔ 

سیریلز یا ڈرامے اچھا نہیں چل رہے ہیں

وہ کہتی ہیں کہ میں ٹی وی سیریل نہیں دیکھتی کیونکہ ان کی بہت سی اقساط ہوتی ہیں۔ کبھی کبھی ایک سیریل میں 26 یا 27 اقساط ہوتے ہیں۔ اس قسم کا کام اب مجھے بہت آسان لگتا ہے کہ حالات بہت بدل چکے ہیں۔ لیکن میں یہ نہیں کہوں گا کہ تمام سیریلز یا ڈرامے اچھا نہیں چل رہے ہیں، کیونکہ ان میں سے کچھ ایسے ہیں۔

 جن کی اداکاری کی مہارت کو نہ صرف پاکستان بلکہ تقریباً ہر دوسرے ملک میں بھی سراہا جاتا ہے جہاں اردو بولی یا سمجھی جاتی ہے۔ 

ڈان کے ساتھ ایک حالیہ انٹرویو میں، انہوں نے فن، ثقافت اور نجی چینلز پر دکھائے جانے والے جدید ٹی وی ڈراموں کے بارے میں بات کی۔

  ٹی وی ڈراموں کے معیار کے بارے میں پوچھے جانے پر انہوں نے کہا کہ میرے خیال میں عام طور پر ٹی وی ڈراموں نے اپنا معیار کھو دیا ہے۔ جب ہم پی ٹی وی میں ڈرامے کرتے تھے تو ہمارے پاس پڑھے لکھے پروڈیوسر یا ڈائریکٹر ہوتے تھے جو کاسٹنگ کے بارے میں بہت کچھ جانتے تھے اور برے سے اچھا سکرپٹ بتا سکتے تھے۔ تمام ڈراموں اور فنکاروں کے اخراجات پی ٹی وی ادا کرتا تھا۔ مجھے یہ کہتے ہوئے بہت دکھ ہو رہا ہے کہ پی ٹی وی کو منصوبہ بند طریقے سے تباہ کر دیا گیا ہے تاکہ نجی چینلز اور “برانڈز” کی مدد کی جا سکے جو اس وقت پرائیویٹ چینلز کو سپانسر کرتے ہیں۔ اب، برانڈز فیصلہ کرتے ہیں کہ کہانی کیا ہے اور اسے کیسے بتایا جانا چاہیے۔ پی ٹی وی میں سیاسی تقرریاں اس سارے گڑبڑ کا بدترین حصہ تھیں۔

یہ بھی پڑھیں | سدھو موسے والا کے والد نے بیٹے کی موت متعلق چونکا دینے والا انکشاف کر دیا

یہ بھی پڑھیں | نامعلوم شخص نے گلوکارہ شازیہ منظور کو “آنٹی” کہہ دیا

 ان کا کہنا ہے کہ اگر آپ دیکھیں کہ پہلے کتنی اچھی اداکاری ہوا کرتی تھی، وہ خراب ہو گئی ہے، اور اس کی وجوہات ہیں۔ لیکن وہ خوش ہے کہ کچھ کیا جا رہا ہے، چاہے وہ اچھا ہو یا برا۔ 

جب ان سے پوچھا گیا کہ آرٹ کونسل جیسے ثقافتی ادارے کمرشل تھیٹر جیسی تجارتی پروڈکشن کو اپنی جگہ کیوں استعمال کرنے دیتے ہیں، تو وہ کہتی ہیں کہ پرفارمنگ آرٹس کو اسپانسر شپ اور سرپرستی کی ضرورت ہے، اور تھیٹر، اداکاروں اور رقاصوں کو سرپرستی کی ضرورت ہے۔ 

انہوں نے پوچھا کہ لیکن اب انہیں کون خرید رہا ہے؟ یہ کاروباری لوگ ہیں، حکومت نہیں، کیونکہ یہ بہت مہنگا ہے۔ مجھے یہ کہتے ہوئے شرم آئے گی کہ حکومت کو فنون کی حمایت کرنی چاہیے کیونکہ یہ صحت، بچوں یا تعلیم کو سپورٹ نہیں کرتی، فن کو تو چھوڑ دیں۔ 

لیکن ہمیشہ ایسے ادارے ہوتے ہیں جو فنکاروں کو موقع دیتے ہیں، وہ کہتی ہیں، کراچی میں نیشنل اکیڈمی آف پرفارمنگ آرٹس کا گھر ہے، جو ایک اداکاری کا اسکول ہے۔ میرے خیال میں وہ اسکول جو پرفارمنگ یا ویژول آرٹس سکھاتے ہیں وہ فنکاروں کی اگلی نسل کے لیے بہترین کام کر رہے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔