شوکت ترین نے آئی ایم ایف کے پانچ مطالبات واضح کر دئیے

 پاکستان پاکستان

 وزیر اعظم کے مشیر برائے خزانہ شوکت ترین

نے کہا ہے کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے 6 ارب ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت کی بحالی کی منظوری کے لیے اپنے بورڈ آف ڈائریکٹرز کا اجلاس بلانے سے قبل پاکستان کو تقریباً پانچ ” اقدامات” مکمل کرنے ہوں گے۔ انہوں نے ان پانچ مطالبات کو واضح بھی کیا۔

  منگل کو یہاں کارپوریٹ فلانتھراپی سروے کے آغاز کے موقع پر صحافیوں سے بات کرتے ہوئے شوکت ترین نے کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ تمام معاملات طے پاگئے ہیں جس کی بنیاد پر انہوں نے ہمیں پانچ پیشگی اقدامات کی فہرست دی ہے تاکہ وہ اس معاملے پر ایک میٹنگ کال کر سکیں۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ مجھ سے تاریخیں مت پوچھیں لیکن آئی ایم ایف سے ڈیل ہو چکی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | پاکستانیوں کو جلد عمرے کی ادائیگی کی اجازت کی توقع   

شوکت ترین نے کہا کہ ان پیشگی اقدامات میں اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ترمیمی) بل، ٹیکس میں چھوٹ کی واپسی اور بجلی کے ٹیرف میں اضافہ شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹیرف ایڈجسٹمنٹ سے متعلق کارروائی کو فی یونٹ 1.39 روپے حالیہ اضافے کے ساتھ پہلے ہی پورا کیا جا چکا ہے جبکہ ٹیکس میں چھوٹ ختم کرنے اور اسٹیٹ بینک کو خود مختاری دینے کے بل تیار کر لیے گئے ہیں۔ اگلا ٹیرف میں اضافہ فروری تا مارچ 2022 تک ہو گا۔ 

 پانچ اقدامات میں اسٹیٹ بینک کے بل کی منظوری، ٹیکس استثنیٰ کی واپسی، توانائی کے ٹیرف میں اضافہ شامل ہیں۔ 

 مشیر خزانہ نے کہا کہ دونوں بلوں کو وزارت قانون و انصاف کے ذریعے حتمی شکل دینے کے لیے دونوں فریقوں کی طرف سے بات چیت مکمل ہونے کے بعد ختمی شکل دی جا رہی ہے۔ جب نشاندہی کی گئی کہ آئی ایم ایف بورڈ کا اجلاس 17 دسمبر کو پہلے سے طے شدہ شیڈول کے مطابق ہو سکتا ہے یا پھر فروری تک تاخیر کا شکار ہو سکتا ہے، تو انہوں نے وضاحت کی کہ آئی ایم ایف بورڈ کو کسی بھی وقت بلایا جا سکتا ہے بشرطیکہ پیشگی مطالبات مکمل ہوں۔ 

 ذرائع نے بتایا کہ شوکت ترین نے سرکلر ڈیٹ میں شامل پبلک سیکٹر اداروں سے بھی کہا تھا کہ وہ اپنے اکاؤنٹس پر وصولیوں کی بنیاد پر منافع کا اعلان کریں۔ حکومت اپنے ڈیویڈنڈ حصہ کو صاف ادائیگیوں کی طرف موڑ دے گی۔ اس سے گردشی قرضے میں 200 ارب روپے سے زیادہ کی کمی آئے گی اور اداروں کی بیلنس شیٹ صاف ہو جائیں گی جس کی بنیاد پر حکومت بین الاقوامی مارکیٹ میں عالمی ڈپازٹری رسیدیںبڑھائے گی۔ 

 ذرائع نے بتایا کہ شوکت ترین آئی ایم ایف کے عملے کو ایس بی پی ترمیمی بل میں نمایاں تبدیلی کے لیے قائل کرنے میں کامیاب رہے کہ سابق وزیر خزانہ ڈاکٹر حفیظ شیخ اور اسٹیٹ بینک کے گورنر ڈاکٹر رضا باقر نے رواں سال مارچ میں 500 ملین ڈالر کی تقسیم سے قبل آئی ایم ایف سے وعدہ کیا تھا۔ 

 ذرائع نے بتایا کہ آئی ایم ایف پیٹرولیم لیوی وصولیوں میں بہتری کے علاوہ 170 ارب روپے مالیت کی ٹیکس چھوٹ چاہتا ہے جس کے لیے حکومت نے سال کے لیے 610 ارب روپے کا ہدف مقرر کیا تھا لیکن پہلے چار ماہ میں تقریباً 50 ارب روپے جمع کر سکے۔ 

لیکن اب بھی کچھ چیزیں ایسی ہیں جن کو تبدیل نہیں کیا جا سکتا کیونکہ ان وعدوں کی بنیاد پر آئی ایم ایف بورڈ سے 500 ملین ڈالر کی تقسیم کی منظوری دی گئی ہے۔ اس کے علاوہ، آئی ایم ایف ٹیکس استثنیٰ اور اسٹیٹ بینک کی انتظامیہ کو بے مثال اختیارات اور تحفظات کے خاتمے کے لیے پیشگی کارروائی کے طور پر آرڈیننس کو قبول کرنے کے لیے مزید تیار نہیں ہے اور اب اس نے پارلیمنٹ سے بلوں کی منظوری کو پیشگی کارروائیوں کے طور پر منسلک کر دیا ہے۔

 مرکزی بینک کی جانب سے پیشگی کارروائیوں کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں، شوکت ترین نے کہا کہ مانیٹری پالیسی اور ایکسچینج ریٹ اسٹیٹ بینک اور مانیٹری پالیسی کمیٹی کا ڈومین ہے اور وہ نہ تو مداخلت کرنا چاہیں گے اور نہ ہی تبصرہ کرنا چاہیں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

cropped-urdu_khabar_logo.png

ہمارے نیوز لیٹر میں شامل ہوں۔

تازہ ترین مضامین، نوکریاں، مفت، تفریحی خبریں براہ راست اپنے ان باکس میں حاصل کریں۔

170000 سبسکرائبرز یہاں ہیں۔