شعیب اختر کی جانب سے پی ٹی وی شو ایشو پر نیا بیان آ گیا

 پاکستان  پاکستان

پی ٹی وی اسپورٹس کے اینکر ڈاکٹر نعمان نیاز اور شعیب اختر کے واقعے کی تحقیقات کرنے کے سرکاری نشریاتی ادارے کے اعلان کے بعد، لیجنڈری سابق فاسٹ باؤلر شعین اختر نے کہا ہے کہ انہوں نے صحیح اور غلط کا فیصلہ اپنے ہم وطنوں پر چھوڑ دیا ہے۔ 

بدھ کو اپنے انسٹاگرام پر ایک پیغام میں سابق فاسٹ بولر نے کہا کہ پاکستان ان کی پہچان ہے اور انہوں نے اپنے ملک کو کبھی مایوس نہیں ہونے دیا۔ 

شعیب اختر نے کہا ہے کہ پاکستان میری پہچان ہے اور میں نے اپنے ملک کو کبھی مایوس نہیں ہونے دیا ہے۔ میں نے اپنا خون پسینہ اس ملک کے لیے دیا ہے۔ میں صحیح اور غلط کے درمیان فیصلہ کرنا اپنے ہم وطنوں کے ہاتھ میں چھوڑتا ہوں۔

یہ بھی پڑھیں | “مارو مجھے مارو” سے شہرت حاصل کرنے والے لڑکے کی نئی ویڈیو وائرل ہو گئی

  ڈاکٹر نیاز، جو پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) میں ایک انتظامی عہدے پر بھی فائز ہیں، نے شعیب اختر کو شو چھوڑنے پر مجبور کر دیا کیونکہ انہوں نے مین آف دی میچ حارث رؤف کی کارکردگی کو ٹھکرایا اور شعیب اختر کو شو سے اٹھ جانے کو کہا۔

 یہ واقعہ غیر ملکی مہمان ویو رچرڈز اور ڈیوڈ گوور کے سامنے ہوا جو جاری ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے حوالے سے اپنی ماہرانہ رائے کے لیے پاکستان میں ہیں۔ 

جیسا کہ حارث رؤف نے نیوزی لینڈ کے خلاف ٹیم کی کامیابی میں ایک اچھا کردار ادا کیا جبکہ شعیب اختر نے لاہور قلندرز کے پلیئرز ڈویلپمنٹ پروگرام اور اس کے تعاون کی تعریف کی جس پر میزبان ناراض ہو. گیا اور شعیب اختر کو شو سے اٹھ جانے کو کہا۔ 

شعیب اختر نے میزبان کو معافی مانگنے کا موقع دیا جبکہ انہوں نے معافی مانگنے سے انکار کر دیا اور انہیں معروف میگا کرکٹ سٹارز کی موجودگی میں استعفی دینے کا اعلان کر دیا۔

شعیب اختر نے اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ میزبان نے نامعلوم وجوہات کی بنا پر قومی ٹی وی پر ایک قومی اسٹار شعیب اختر کی توہین کی ہے۔ میزبان نے بین الاقوامی سٹارز کے سامنے میری توہین کی ہے۔ میں نے اسے وقفے کے دوران معافی مانگنے کا موقع دیا لیکن وہ نہیں مانے۔ پاکستان کرکٹ اور ملک کے امیج کی خاطر میں معاملہ طے کرنا چاہتا تھا لیکن وہ معافی مانگنے کو تیار نہیں تھے۔ میرے پاس استعفیٰ دینے اور سٹیج چھوڑنے کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا۔ میں مزید اس طرح کی توہین برداشت نہیں کر سکتا۔

  بعد ازاں، شدید ردعمل کے بعد، ڈاکٹر نیاز نے ایک پیغام پوسٹ کیا جس میں اعتراف کیا گیا کہ شعیب اختر ایک سٹار ہیں اور اس سے کوئی انکار نہیں کر رہا لیکن اپنے توہین آمیز رویے پر معذرت نہیں کی۔ 

کہا جاتا ہے کہ اس واقعے سے ملک اور پاکستان کرکٹ کی بدنامی ہوئی۔ 

اس واقعے کے بعد سابق کرکٹرز اور سیاستدانوں نے بھی شعیب اختر کی حمایت کی۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔