سی سی پی او لاہور عمر شیخ ایک اور تنازعے میں پھنس گئے

کیپٹل سٹی پولیس آفیسر (سی سی پی او) عمر شیخ نے ایک سینئر پولیس آفیسر کے خلاف موٹروے کیس کے ملزم عابد کی گرفتاری پر سی سی پی او کو اعتماد میں نہ لینے پر سخت الفاظ کے تبادلے کے بعد اس کے خلاف مقدمہ درج کرنے کا حکم دیا ہے جس کے بعد وہ پھر تنازعے کی نذر ہو گئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سابق پولیس صوبائی چیف سے تنازعہ اور بعد میں موٹر وے کیس کے بارے میں اپنے متنازعہ ریمارکس کی وجہ سے لاہور پولیس چیف سرخیوں میں رہا ہے۔ جب ایک غیر ملکی تعلیم یافتہ پولیس افسر نے ایک میٹنگ میں اس کے ساتھ بدسلوکی کی تھی تب بھی انہیں تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

 نجی نیوز کی ایک رپورٹ کے مطابق ، سی سی پی او شیخ نے گوجرانوالہ میں حزب اختلاف کے جلسے سے متعلق منصوبے پر تبادلہ خیال کے لئے جمعرات کی صبح ساڑھے ایک بجے پنجاب سیف سٹیز اتھارٹی میں اجلاس طلب کیا تھا۔ ذرائع نے بتایا کہ ایس پی سی آئی اے عاصم افتخار کمبوہ سے بھی اجلاس میں شامل ہونے کو کہا گیا تھا لیکن وہ تھوڑی دیر سے پہنچے اور سی سی پی او کو بتایا کہ ان کی طبیعت ٹھیک نہیں ہے جس کی وجہ سے دونوں افسران کے مابین تکرار ہوئی تھی۔

 سی سی پی او نے سول لائنز ایس پی کو سی آئی اے ایس پی کو گرفتار کرنے کا حکم دیا جس پر سی آئی اے ایس پی نے کہا کہ وہ کانسٹیبل نہیں ہے۔ اس کے بعد سی سی پی او نے ایس پی سے تمام اجازت نامے واپس لینے اور ان کے خلاف پہلی انفارمیشن رپورٹ (ایف آئی آر) کے اندراج کا حکم دیا جس پر ایس پی نے کہا کہ وہ اسے مکے مارے گا۔ 

ڈی آئی جی آپریشنز اور ڈی آئی جی انویسٹی گیشن نے دونوں افسران کی ثالثی اور تسکین کی۔ تبادلے کے دوران ، سی سی پی او نے ایس پی سے بھی کام بند کرنے اور سرکاری گاڑی واپس کرنے کو کہا۔ تاہم ، سی سی پی او نے اپنا خیال بدلا اور سول لائنز کے ایس پی کو ایف آئی آر درج کرنے سے روک دیا۔

 بعد میں معلوم ہوا کہ سی آئی اے ایس پی نے انسپکٹر جنرل پولیس (آئی جی پی) پنجاب انعام غنی سے بھی ملاقات کی اور انہیں صورتحال سے آگاہ کیا۔ نجی نیوز کی رپورٹ کے مطابق پولیس چیف نے سی سی پی او سے برہمی کا اظہار کیا اور ایس پی سے کہا کہ وہ کام جاری رکھیں۔ 

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *