سیاسی بحران؛ ڈالر کی اونچی اڑان، 189 تک پہنچ گیا

پاکستانی روپیہ نے آج ٹریڈنگ کے دوران انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کے مقابلے میں 189 روپے سے اوپر فروخت ہو کر تمام گزشتہ ریکارڈز کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔

ملک میں جاری سیاسی بحران کے باعث ڈالر نے اچانک اونچی اڑان بھر لی ہے۔ 

 مقامی کرنسی انٹربینک مارکیٹ میں بدھ کے روز 186.13 روپے کے بند ہونے سے 2.05 روپے یا 1.09 فیصد کمی کے ساتھ 188.18 روپے پر بند ہوئی۔

 نجی ٹی وی سے بات کرتے ہوئے سابق وزیر خزانہ ڈاکٹر حفیظ پاشا نے کہا کہ پاکستانی کرنسی معاشی اور سیاسی دوہرے دباؤ میں ہے۔ 

 انہوں نے کہا کہ غیر یقینی سیاسی صورتحال، کرنٹ اکاؤنٹ کا بڑھتا ہوا خسارہ اور زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی گرین بیک کے مقابلے میں روپے کی آزادانہ گراوٹ کی بنیادی وجوہات ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | قومی اسمبلی بحال ہونے کے بعد تمام نگاہیں آج وزیر اعظم عمران خان کے خطاب پر  

 انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے پروگرام کی معطلی نے بھی تشویش میں اضافہ کیا ہے۔ 

 روپے نے گزشتہ 11 ماہ سے گراوٹ کا رجحان برقرار رکھا ہے۔ مئی 2021 میں ریکارڈ کی گئی 152.27 روپے کی ریکارڈ بلندی کے مقابلے اس میں آج تک 23.58% (یا 35.91 روپے) کی کمی واقع ہوئی ہے۔ 

 مرکزی بینک کے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق، 1.09 فیصد کی تازہ کمی کے ساتھ، 1 جولائی 2021 کو رواں مالی سال کے آغاز سے پاکستانی روپے کی قدر میں 19.44 فیصد (یا 30.64 روپے) کی کمی واقع ہوئی ہے۔ 

 انہوں نے بتایا کہ اگلے چار سے پانچ ماہ کے لیے پاکستان کی ضرورت تقریباً 13 ارب ڈالر ہے۔ تاہم، جاری سیاسی اور معاشی بحران کی وجہ سے، مانگ کو پورا کرنا “مشکل” ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں