سپریم کورٹ نے مرتضی وہاب کو ہٹانے کا آرڈر واپس لے لیا

سپریم کورٹ نے پیر کو کراچی کے ایڈمنسٹریٹر مرتضیٰ وہاب کی جانب سے عدالت میں ’غیر مشروط معافی‘ جمع کرانے کے بعد انہیں عہدے سے ہٹانے کا حکم واپس لے لیا ہے۔

 سپریم کورٹ نے مرتضی وہاب کو مشورہ دیا کہ وہ “سیاسی وابستگی” سے بالاتر ہو کر غیر جانبدارانہ طریقے سے اپنے فرائض انجام دیں۔ 

 اس سے پہلے دن میں، سپریم کورٹ نے وزیراعلیٰ سندھ کو ہدایت کی تھی کہ وہاب وہاب کو ان کے عہدے سے ہٹا دیں جب بعد ازاں چیف جسٹس کے ساتھ نسلہ ٹاور اور کراچی میں تجاوزات سے متعلق کیسز کی سماعت کے دوران گرما گرم الفاظ کا تبادلہ ہوا۔

 چیف جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ ایڈمنسٹریٹر انتظامی عہدہ رکھنے کا اہل نہیں کیونکہ وہ ایڈمنسٹریٹر کے بجائے سیاست دان کی طرح کام کر رہے ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | فواد چوہدری نے مولانا فضل الرحمن سے وزیر اعظم عمران خان کا شکریہ کرنے کا مطالبہ کر دیا

 جسٹس گلزار نے مزید کہا کہ اگر آپ غیر جانبداری سے فرائض سرانجام نہیں دے سکتے تو آپ کو استعفیٰ دے دینا چاہیے۔

 اس پر مرتضی وہاب نے ریمارکس سے ناراض ہو کر کہا کہ کیا وہ حکومت چھوڑ دیں؟ 

 انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کھلی عدالتوں میں حکومت کے خلاف آبزرویشن پاس کرتی ہے۔ ہمیں کیا کرنا چاہئے؛ کیا ہم حکومت سے دستبردار ہو جائیں؟ 

اس پر چیف جسٹس گلزار نے انہیں کہا کہ وہ کمرہ عدالت سے چلے جائیں۔ ’’آپ منتظم ہیں یا سیاسی رہنما؟‘‘  ایڈمنسٹریٹر عوام کی خدمت کے لیے مقرر کیے گئے ہیں سیاست کھیلنے کے لیے نہیں۔

 ایسا لگتا ہے کہ موجودہ سٹی ایڈمنسٹریٹر اپنی ذمہ داریاں نبھانے میں ناکام رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیراعلیٰ کو کراچی کے لیے ایک “غیر جانبدار اور اہل” ایڈمنسٹریٹر مقرر کرنا چاہیے۔ 

 سپریم کورٹ نے مرتضی وہاب کو یہ بھی حکم دیا کہ وہ تجاوزات ہٹا کر اور پارکوں کے لیے مختص اراضی پر تجاوزات نہ ہونے کو یقینی بنا کر شہر کے تمام پارکوں کو ان کی اصل حالت میں بحال کریں۔ 

 چیف جسٹس گلزار نے مرتضی وہاب سے کہا  کہ کیا کراچی ان کی ذاتی ملکیت ہے؟ بن قاسم پارک اور ہل پارک کو اپنے نام پر منتقل کریں۔ فریئر ہال پارک کو بھی لے لیں۔ کراچی میں کتنے پارک باقی رہ گئے ہیں؟ ابھی انہیں ختم کریں۔ باقی چند پارکس اپنے افسران میں تقسیم کریں۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔