سوات مکمل طور پر سول انتظامیہ کے پاس ہے، خیبر پختونخواہ پولیس

وادی سوات میں طالبان

  وادی سوات میں طالبان کی موجودگی کے بارے میں مسلسل قیاس آرائیوں کے بعد، خیبر پختونخواہ پولیس نے واضح کیا ہے کہ وہ سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ویڈیوز سے باخبر ہے۔ 

 کے پی پولیس سینٹرل آفس نے ایک دن پہلے جاری کردہ ایک پریس ریلیز میں کہا کہ پولیس عام لوگوں کے ان خدشات سے بھی آگاہ ہے کہ سوات 2008-09 کے دور میں واپس آ سکتا ہے جب طالبان نے سوات پر حکومت کی تھی۔ 

عوام کو یقین دلاتے ہوئے کہ پولیس اس حقیقت سے پوری طرح واقف ہے کہ سوات کے کچھ افراد جو پہلے افغانستان میں مقیم تھے سوات کے دور دراز پہاڑی علاقوں میں موجود ہیں۔ اس نے کہا کہ وادی مکمل طور پر سول انتظامیہ اور تمام قانون کے کنٹرول میں ہے۔ نافذ کرنے والے ادارے کسی بھی واقعے کا جواب دینے کے لیے تیار ہیں۔

سوات میں دہشت گردی کی کوئی گنجائش نہیں

 اس میں کہا گیا کہ سوات کے پرامن معاشرے میں کسی بھی شکل و صورت میں دہشت گردی کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ 

پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ ایل ای اے مناسب طریقے سے رکھے گئے ہیں اور مقامی عوام کی امنگوں کے مطابق سوات میں امن کو یقینی بنانے کے لیے تمام ممکنہ اقدامات کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں |کراچی: بارشوں کی پیشنگوئی؛ انٹرنیڈیٹ امتحانات کو ملتوی کر دیا گیا

یہ بھی پڑھیں | مفتاح اسماعیل نے کراچی عورت کی مہنگائی پر ویڈیو کا جواب دے دیا

احتجاج دریں اثناء، مقامی باشندوں اور سول سوسائٹی کے ارکان نے جمعہ کو سوات کی دو تحصیلوں میں احتجاجی مظاہرے کیے تاکہ ضلع کے کچھ حصوں میں طالبان کے دوبارہ سر اٹھانے کی اطلاع کے بعد سکیورٹی کا مطالبہ کیا جائے۔ 

بینرز اور پلے کارڈز اٹھائے سول سوسائٹی کے ارکان خوازہ خیلہ اور کبل بازاروں میں جمع ہوئے۔ وہ نعرے لگا رہے تھے اور حکومت سے ضلع میں امن برقرار رکھنے کے لیے اقدامات کرنے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ 

طالبان کے خلاف فوجی آپریشن

مظاہرین نے کہا کہ طالبان کے خلاف پچھلے فوجی آپریشن کے دوران سوات کے لوگوں کو بہت نقصان اٹھانا پڑا۔ حکومت کو اقدامات کرنے چاہئیں اس سے پہلے کہ بہت دیر ہو جائے۔

 انہوں نے پولیس اور سیکورٹی فورسز پر زور دیا کہ وہ صورتحال کا نوٹس لیں اور خوبصورت وادی میں امن و امان برقرار رکھنے کے لیے اقدامات کریں۔ 

 دریں اثنا، پولیس نے نئی ترقی کے پیش نظر ضلع میں مزید چیک پوسٹیں قائم کیں اور چیکنگ کو تیز کر دیا۔ لوگوں اور گاڑیوں کو شہر میں داخل ہونے سے پہلے چیک کیا جا رہا تھا۔ پولیس نے علاقے میں گشت بھی بڑھا دیا ہے۔

 پولیس حکام کا کہنا تھا کہ وہ عوام کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے پرعزم ہیں اور کسی کو بھی ضلع کا امن خراب کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ ضلع کے پہاڑی علاقوں میں بدامنی پھیلی ہوئی ہے جہاں عسکریت پسندوں کے دوبارہ ابھرنے کی اطلاع کے بعد لوگ زیادہ تر گھروں کے اندر ہی رہتے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔