سندھ: ہیپاٹائٹس سی کے کیسز میں اضافہ ہو رہا ہے، رپورٹ

صوبہ سندھ میں ہیپاٹائٹس ’سی‘ کے مریضوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے جب کہ صوبے میں ہیپاٹائٹس ’بی‘ کے پھیلاؤ میں خاطر خواہ کمی آئی ہے۔ 

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) اور محکمہ صحت سندھ کے مشترکہ سیرو پریولینس سروے

 ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) اور محکمہ صحت سندھ کے مشترکہ سیرو پریولینس سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ سندھ میں ہیپاٹائٹس ‘سی’ 2008 میں 5 فیصد سے بڑھ کر 6.1 فیصد ہو گیا ہے جبکہ ہیپاٹائٹس ‘بی’ کے پھیلاؤ می 2.5 فیصد سے 1.05 فیصد تک نمایاں کمی دیکھی گئی ہے۔

 سروے رپورٹ میں متاثرہ جسمانی رطوبتوں کی وجہ سے خاندان کے افراد کے اندر پھیلنے والی بیماری کے مضبوط تعلق کو بھی اجاگر کیا گیا ہے۔ دیگر خطرے والے عوامل ہیلتھ کئیر ترتیبات سے آرہے تھے جیسے علاج کے انجیکشن (12 فیصد)، خون کی منتقلی (14.8 فیصد)، ہسپتال میں داخل ہونا (13.8 فیصد) یا دانتوں کا علاج کروانا (12.9 فیصد)۔ 

اس کے علاوہ، 14.5 فیصد کیسوں میں روایتی رسومات جیسے کان اور ناک چھیدنے، ٹیٹو بنوانے اور سر منڈوانے کے ذریعے پھیلنے والی کمیونٹی بھی معاون عوامل تھے۔ 

 وائرل ہیپاٹائٹس بی، سی اور ڈی کے ساتھ ساتھ ایچ آئی وی پر سیرو پریویلنس سروے کے نتائج کو صوبائی ای پی آئی سیل میں منعقدہ ایک تقریب میں پاکستان میں ڈبلیو ایچ او کی نمائندہ ڈاکٹر پالیتھا مہیپالا اور سندھ کی وزیر صحت ڈاکٹر عذرا پیچوہو نے مشترکہ طور پر پیش کیا۔

یہ بھی پڑھیں | خون کا عطیہ کرنے والے کو جسمانی اور ذہنی فائدہ ملتا ہے، رپورٹ 

یہ بھی پڑھیں | وارننگ: تین وٹامن سپلیمنٹس پھیپھڑوں کے کینسر کے خطرے سے منسلک 

 ڈبلیو ایچ او کے حکام نے بتایا کہ وائرل ہیپاٹائٹس بی، سی اور ڈی اور ایچ آئی وی پر سیرو پریویلنس سروے صوبہ سندھ کے 29 اضلاع میں کیا گیا، جس کے لیے عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے 29 اضلاع میں سروے کرنے کے لیے تکنیکی اور مالی مدد فراہم کی۔ 

 سیرو پریولینس سروے، پاکستان کی تاریخ میں اپنی نوعیت کا پہلا سروے تھا، جس میں ایچ آئی وی/ایڈز کو بھی شامل کیا گیا تھا اور سیرو کے پھیلاؤ سے متعلق ڈیٹا بیک وقت اکٹھا کیا گیا تھا۔ 

کراس سیکشنل آبادی کے سروے کے دوران، 1160 گھرانوں پر محیط 5771 افراد کے مجموعی نمونے، ڈبلیو ایچ او کی منظور شدہ ریپڈ ڈائیگنوسٹک ٹیسٹ کٹس کے ذریعے وائرل ہیپاٹائٹس بی، سی اور ڈی اور ایچ آئی وی کے لیے ٹیسٹ کیے گئے۔ سروے میں 47.5 فیصد مرد، 52.4 فیصد خواتین اور 08 خواجہ سراؤں (0.1 فیصد) نے حصہ لیا۔ 

 ڈاکٹر عذرا پیچوہو نے سروے کے لیے تکنیکی اور مالی مدد فراہم کرنے پر ڈبلیو ایچ او کا شکریہ ادا کیا اور صوبے میں ہیپاٹائٹس ‘بی’ وائرس کے پھیلاؤ کو کم کرنے کے لیے ہیپاٹائٹس ‘بی’ کی پیدائشی خوراک کے تعارف کو ایک اہم مداخلت کے طور پر ذکر کیا۔ 

 انہوں نے صوبے بھر میں پیدائش کے 24 گھنٹے کے اندر ہیپاٹائٹس بی کی پیدائشی خوراک کو ادارہ جاتی بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ سندھ حکومت ہیپاٹائٹس اور ایچ آئی وی کی تشخیص اور علاج کو پرائمری ہیلتھ کیئر کی سطح تک بڑھانے کے لیے ہر ممکن تعاون فراہم کر رہی ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں