سندھ: ڈینگی کیسز کی تعداد میں مسلسل اضافہ

ڈینگی کی صورتحال بدستور سنگین

صوبہ سندھ میں خاص طور پر کراچی میں ڈینگی کی صورتحال بدستور سنگین ہے۔

علامات رکھنے لوگوں کو مشورہ دیا جاتا ہے کہ ڈینگء علامات کے ظاہر ہونے کے 24 گھنٹوں کے اندر ڈینگی ٹیسٹ کروا لیں۔ 

 سرکاری اعداد و شمار کے مطابق صرف کراچی میں ایک پندرہ دن میں ڈینگی کے کیسز کی تعداد 582 تک پہنچ گئی ہے۔

ماہرین صحت نے متنبہ کیا کہ کسی بھی (نااہل) ڈاکٹر کی طرف سے مریض کے ناقص انتظام کے ساتھ ساتھ خود ادویات، بشمول اینٹی بائیوٹکس، سٹیرائیڈز اور یہاں تک کہ کچھ عام دوائیوں کا استعمال، جو حقیقت میں پلیٹلیٹ کی سطح کو کم کرتے ہیں، کیس کو پیچیدہ بنا سکتا ہے، جس سے موت واقع ہو سکتی ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | انسداد دہشت گردی کیس میں عمران خان کی عدالت پیشی

یہ بھی پڑھیں | پاکستان آئی ایم ایف سے 6 دن کے اندر امداد وصول کرے گا

ڈاؤ یونیورسٹی ہسپتال، اوجھا کیمپس کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر زاہد اعظم نے بتایا کہ ہمیں بہت سارے مریض مل رہے ہیں۔ کچھ مریضوں کی حالت تشویشناک ہے جنہیں انتہائی نگہداشت کے یونٹ اور ہائی ڈیپنڈنسی یونٹ میں داخل کیا گیا ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ چند ہفتوں میں ڈینگی کے 40 سے زائد مریض ہسپتال میں داخل ہیں۔

 انہوں نے نشاندہی کی کہ حکومتی اعداد و شمار بیماری کے اصل بوجھ کی عکاسی نہیں کر سکتے کیونکہ ڈینگی کے زیادہ تر مریضوں نے پرائیویٹ کلینکس میں جنرل فزیشنز سے علاج کی کوشش کی۔ یہ صرف اس وقت ہے جب بیماری سنگین ہو گئی تھی جب مریضوں نے ترتیری نگہداشت کے اسپتالوں میں اطلاع دی تھی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔