سدھو موسے والا کے قتل میں شامل قاتل افراد قتل کر دئیے گئے

کار کو اوور ٹیک کیا اور اس پر فائرنگ کی

  پولیس کے مطابق منپریت منو اور جگدیپ روپا نے سب سے پہلے موس والا کی کار کو اوور ٹیک کیا اور اس پر فائرنگ کی۔

حکام نے بتایا کہ تقریباً دو ماہ قبل پنجابی گلوکار شوبھدیپ سنگھ سدھو موسی والا کے قتل میں مطلوب دو افراد کو بدھ کو امرتسر ضلع میں ہندوستان-پاکستان سرحد کے قریب پنجاب پولیس کے ساتھ ایک تصادم میں گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا۔

 تقریباً پانچ گھنٹے تک جاری رہنے والے تصادم میں تین پولیس اہلکار اور ایک کیمرہ مین بھی زخمی ہوئے، حکام نے بتایا کہ ان کی چوٹیں نازک نہیں ہیں۔ 

پولیس نے ہلاک ہونے والے دو افراد کی شناخت من پریت منو اور جگدیپ روپا کے طور پر کی ہے۔ انہوں نے ان دونوں کو جگو بھگوان پورییا گینگ کے ممبران کے طور پر بیان کیا، جس نے مبینہ طور پر موسوالا کے قتل کے لیے مرکزی ملزم لارنس بشنوئی کو شارپ شوٹر فراہم کیے تھے۔

یہ بھی پڑھیں | غیر مسلم اسرائیلی شخص نے مکہ معظمہ میں داخل ہو کر وی لاگ بنایا، ہنگامہ برپا 

یہ بھی پڑھیں | گستاخانہ بیانات کے خلاف آواز اٹھانے والے بھارتی صحافی زبیر کو ضمانت مل گئی 

پرمود بان، اے ڈی جی پی، اینٹی گینگسٹر ٹاسک فورس ​​نے بتایا کہ من پریت منو اور جگدیپ بھائی روپا ایک انکاؤنٹر میں مارے گئے ہیں۔ دونوں سدھو موسوالا قتل کیس میں مطلوب تھے۔

 پولیس کے مطابق، منو اور روپا نے سرحد سے تقریباً 14 کلومیٹر دور بھکنا گاؤں کے قریب کھیت کے کھیتوں کے درمیان ایک ویران گھر میں پناہ لی تھی، جب پولیس نے انہیں گھیر لیا۔ ایک افسر نے بتایا کہ انہیں ہتھیار ڈالنے کے لیے کہا گیا لیکن انہوں نے پولیس پر فائرنگ کی۔ 

پنجاب کے ڈی جی پی گورو یادو انکاؤنٹر کے مقام پر پہنچے جہاں سے پولیس نے بعد میں ایک اے کے 47، ایک پستول اور ایک بیگ برآمد کیا۔ پولیس نے زخمیوں کی شناخت نہیں کی ہے لیکن کہا ہے کہ ایک پولیس اہلکار کی ران پر، دوسرے کو سینے میں اور تیسرے کو آنکھ کے قریب گولی لگی ہے۔ 

پولیس افسران نے بتایا کہ منو اور روپا موسی والا کے قتل کے بعد سے حرکت میں تھے اور حال ہی میں راجستھان سے دوبارہ پنجاب میں داخل ہوئے تھے۔ انہوں نے ترن تارن میں موٹر سائیکل پر سوار دونوں کی سی سی ٹی وی تصویر کی طرف اشارہ کیا جو کچھ دن پہلے سوشل میڈیا پر سامنے آئی تھی۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔