سابق پاکستانی منسٹر نسیم اشرف کا اسرائیل کا وزٹ 

پاکستانی وفد کا اسرائیل کا وزٹ

گروپ کے رہنما اور ٹرپ آرگنائزرز نے بتایا کہ پاکستانیوں کے وفد نے، جس میں ایک سابق حکومتی وزیر بھی شامل ہے، بدھ کو یروشلم میں اسرائیلی وزارت خارجہ کے حکام سے ملاقات کی ہے۔

 غیر ملکی میڈیا نے رپورٹ کیا کہ پاکستان ان ممالک میں شامل ہے جن کے فلسطینی ریاست کے دیرینہ مسئلے کی وجہ سے اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات نہیں ہیں اور اس کا کہنا ہے کہ کسی سرکاری وفد نے اسرائیل کا دورہ نہیں کیا۔

وفد میں امریکی مسلمانوں کے نمائندے بھی شامل

ٹرپ آرگنائزر کا کہنا ہے کہ وفد میں امریکی مسلمانوں کے نمائندے بھی شامل تھے۔

 ملٹی فیتھ ویمنز امپاورمنٹ کونسل اور شاراکا، امریکہ میں قائم ایک غیر سرکاری گروپ ابراہیم معاہدے کے نتیجے میں قائم کیا گیا تھا، جس کی ثالثی ٹرمپ انتظامیہ نے 2020 میں کی تھی اور اسرائیل اور چار عرب ممالک کے درمیان تعلقات کو معمول پر لایا تھا جن میں متحدہ عرب امارات، بحرین، سوڈان اور مراکش شامل ہیں۔

نسیم اشرف کا تفصیلات بتانے سے گریز

وفد کے سربراہ نسیم اشرف نے کہا کہ ہاں، میں بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے ایک وفد کے ساتھ یروشلم میں ہوں۔  انہوں نے وفد کے دیگر ارکان کے بارے میں مزید تفصیلات بتانے سے گریز کیا۔

یہ بھی پڑھیں |  امریکی صدر کی دنیا سے پاکستان کی مدد کی درخواست

یہ بھی پڑھیں |  بلاول بھٹو کی تعلیم اور سیلاب چیلنجز پر ملالہ سے گفتگو

نسیم اشرف پاکستان کے وزیر ترقی اور پاکستانی کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیئرمین ہوا کرتے تھے۔ 

 یہ دورہ صحافی احمد قریشی، جس نے بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے یروشلم کا بھی سفر کیا تھا، کو پاکستان ٹیلی ویژن نے ان کے دورے کے بعد نشر کیے جانے کے تین ماہ سے زیادہ عرصے کے بعد کیا ہے۔ 

نسیم اشرف بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ

 پاکستانی نژاد امریکی شہری انیلہ علی جو امریکہ میں رہتی ہیں اور اس سفر کے منتظمین میں سے ایک ہیں، نے کہا کہ نسیم اشرف بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے یروشلم میں تھے۔ انہوں نے پاکستان پر زور دیا کہ وہ اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات استوار کرے جو اس کے بہترین قومی مفاد میں ہوں گے۔ 

ترکی پاکستان کے لیے ایک اچھی مثال ہے

 انہوں نے کہا کہ ترکی پاکستان کے لیے ایک اچھی مثال ہے کیونکہ ترک قیادت نے اپنے قومی مفاد میں اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات قائم کیے ہیں۔ اگر ترکی یہ کر سکتے ہیں تو ہم کیوں نہیں کر سکتے۔   انیلا علی نے کہا کہ اسرائیل تازہ ترین سیلاب کے تناظر میں ملک کے آبپاشی کے نظام کو بہتر بنانے میں پاکستان کی رہنمائی اور مدد کر سکتا ہے، جس کی وجہ سے جون کے وسط سے اب تک 1,569 اموات ہو چکی ہیں

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔