روسی وزیر خارجہ سیرگی لاوروو کی افغانستان امن عمل میں پاکستان کے کردار کی تعریف

روسی وزیر خارجہ سیرگی لاوروو نے افغانستان امن عمل میں پاکستان کے کردار کو سراہا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ روس کو توقع ہے کہ 18 مارچ 2021 کو توسیع شدہ ’’ ٹروکا ‘‘ کے اجلاس سے انٹرا افغان مذاکرات کو ایک اہم تحریک ملے گی اور اس پروگرام کی تیاری میں پاکستان کا فعال کردار قابل تحسین ہے۔

 روسی وزیر خارجہ لاوروف نے ان خیالات کا اظہار ایک انٹرویو کے دوران کیا اور اس کے اہم نکات ذیل میں شیئر کیے گئے ہیں: 

انہوں نے کہا کہ ہم توقع کرتے ہیں کہ 18 مارچ 2021 کی توسیعی “ٹروکا” کی میٹنگ سے افغانستان کے درمیان باہمی مذاکرات کو ایک اہم قوت ملے گی۔ ہم اس تقریب کی تیاری میں پاکستانی فریق کے فعال کردار کو سراہتے ہیں۔ ماسکو نے افغان وفد اور طالبان کے نمائندوں کے مابین الگ الگ ملاقاتیں بھی کیں۔

 ہم اس کو اہم سمجھتے ہیں کہ دونوں فریقین افغانستان کے درمیان باہمی مذاکراتی عمل کو تیز کرنے کے حق میں بات کریں۔ جہاں تک اس میں بھارت کی شرکت کی بات ہے ، ہم اس حقیقت سے آگے بڑھ رہے ہیں کہ ہندوستان ایک ذمہ دار عالمی طاقت کے طور پر خود ہی اپنی خارجہ پالیسی کی ترجیحات کا تعین کرتا ہے۔ اسی کے ساتھ ہی ہمیں یقین ہے کہ دنیا کے کسی بھی خطے کی ریاستوں کے مابین پائے جانے والے اختلافات کو ، یقینا جنوبی ایشیاء سمیت ، بین الاقوامی قانون کی بنیاد پر پرامن ، مہذب انداز میں حل ہونا چاہئے۔ 

یہ بھی پڑھیں | بائڈن کے ماحولیاتی اجلاس میں پاکستان کیوں شریک نہیں؟

روس اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مستقل ممبر کی حیثیت سے اس کی ہر ممکن مدد کرنے کے لئے تیار ہے۔ اصولی طور پر ہم سرد جنگ کے جذبے کے تحت جغرافیائی سیاسی ڈھانچے کی تشکیل کی حمایت نہیں کرتے ہیں۔

 جدید حالات میں ایسی کثیر الجہتی انجمنوں ، اقدامات اور تصورات کا مطالبہ کیا جارہا ہے جو جامعیت ، اجتماعیت اور مساوات کے اصولوں پر مبنی ہیں۔

 انہوں نے کہا کہ یہی فلسفہ شنگھائی تعاون تنظیم کی سرگرمیوں کا حصول کرتا ہے ، جس میں ماسکو ، اسلام آباد اور نئی دہلی ممبر ہیں۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x