دیہاتی ملیر ایکسپریس کے خلاف سڑکوں پر نکل آئے

ملیر ایکسپریس وے کا راستہ بنانے کے لئے راہ میں حائل مکانات اور تجازوات کو منہدم کیا جا رہا ہے جس کے خلاف ملیر کے دیہاتی سڑکوں پر نکل آئے ہیں۔

رافیل سہیل راجہ اور اس کے 8 بچے پریشان ہیں کہ جام کھندہ گاؤں کے قریب گلشن مریم میں واقع اس کا 120 مربع گز مکان کو ملیر ایکسپریس وے کا راستہ بنانے کے لئے منہدم کیا جارہا ہے۔

 سہیل راجہ پیشہ کے لحاظ سے ڈرائیور ہیں جو پچھلے چار سالوں سے گلشنِ مریم میں رہ رہا تھا۔ انہوں نے 2017 میں 2 لاکھ میں اپنا پلاٹ خریدا تھا۔ 

انہوں نے نجی نیوز کو بتایا کہ میرے پاس تمام سرکاری دستاویزات اور ڈپٹی کمشنر ملیر آفس کے لیز کے کاغذات موجود ہیں، لیکن مختارکار کی سربراہی میں ایک سرکاری ٹیم نے ہمارے علاقے کا دورہ کیا اور انہدام کے لئے 100 کے قریب مکانات پر ریڈ کراس لگا دیا۔

 انہوں نے بتایا کہ انسداد تجاوزات کی ٹیم گذشتہ بدھ کے روز سب سے پہلے اس علاقے میں آئی تھی۔ راوفیل سہیل نے کہا کہ سرکاری عہدیداروں نے بتایا کہ ہمارے مکان ملیر ایکسپریس وے کی راہ پر ہیں اور اسے ختم کر دیا جانا چاہئے۔

تفصیلات کے مطابق بدھ اور جمعرات کو 40 کے قریب کنکریٹ اور نان کنکریٹ ڈھانچے کو مسمار کردیا گیا۔ راجہ نے وضاحت کی کہ وہ ملیر ندی کے بندھ یا پشتے کے بائیں طرف سے تقریبا 350 فٹ دور واقع ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ میمن گوٹھ گلشن مریم کے مخالف سمت میں ہے اور ملیر نادی سے کم فاصلے پر واقع ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے لیز کے کاغذات ملیر ڈی سی آفس میں جمع کروائے  جیسا کہ افسران نے ہدایت دی۔

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم کا کسانوں کے لئے جلد خصوصی پیکج متعارف کروانے کا اعلان

زرائع کے مطابق 24 دسمبر کو بلاول بھٹو نے اس منصوبے کا سنگ بنیاد رکھا۔ چار لین ایکسپریس وے ملیر ندی کے ساتھ مل کر دریائے ہنو چوک سے کے پی ٹی فلائی اوور کے قریب چل پائے گی جو کہ لنک روڈ کے راستے کٹھور کے قریب کراچی حیدرآباد موٹر وے تک جائے گی۔ یہ 39.3 کلومیٹر لمبا ہوگا۔

 حکومت کا کہنا ہے کہ یہ تعمیر کی جارہی ہے ، بندرگاہ سے شاہراہوں تک پہنچنے کے لئے ٹریفک کے لئے ایک نیا راستہ فراہم ہو گا۔ حکومت اس کو 28 ارب روپے میں پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت تعمیر کررہی ہے۔ 

 دریں اثنا ، کرسچن ویلفیئر فاؤنڈیشن گلشن مریم کے مکینوں کے قیام کا حکم حاصل کرنے کی کوشش کرنے عدالت گئی ہے۔ فاؤنڈیشن کے چیئرمین ، گلزار پرنس کے مطابق ، ان کے پاس 2012 میں جاری کردہ حکومت سندھ کی طرف سے ایک گیٹ آباد رہائشی لیز ہے۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x