دوسو افراد کا سرکاری حج، وزیر اعظم نے ایکشن لے لیا

سرکاری حج

وزیر اعظم شہباز شریف نے وزارت مذہبی امور سے اس رپورٹ پر وضاحت طلب کر لی ہے جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ وزارت کے 200 اہلکار سرکاری خرچ پر حج کرنے جا رہے ہیں۔ 

ڈیجیٹل میڈیا پر وزیر اعظم کے فوکل پرسن محمد ابوبکر عمر نے بتایا کہ وزیر اعظم نے اس پر ایکشن لے لیا ہے۔ 

وزیراعظم پاکستان نے وزارت مذہبی امور سے وضاحت طلب کی ہے۔ وزارت مذہبی امور کا کچھ عملہ حجاج کرام کی خدمت کے لیے بھیجنا معمول کی بات ہے لیکن یہ رپورٹ ایک مختلف تاثر دیتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | ممکنہ کووئڈ۱۹: بلاول بھٹو نے خود کو قرنطینہ کر لیا 

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف آج پری-بجٹ کانفرنس سے خطاب کریں گے 

 رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فہرست میں شامل 35 افراد صرف مذہبی امور کے وزیر مفتی عبدالشکور کے دفتر سے ہیں، جن میں پانچ ڈرائیور، چار گن مین، ایک باورچی اور 11 پرسنل سیکرٹریز اور معاونین شامل ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وزیر خود بھی اس سال حج کریں گے۔ 

رپورٹ میں وزارت کے ترجمان کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ وزارت کا عملہ ہر سال حج کے دوران عازمین کی مدد کے لیے جاتا ہے۔ رپورٹ میں ترجمان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا کہ ڈرائیور اور بندوق بردار جیسے عملے کو سامان لے جانے وغیرہ جیسے کاموں میں مدد کے لیے ٹیگ کیا جاتا ہے۔

 اس نے یہ بھی کہا کہ 200 افراد کے سفر پر ٹیکس دہندگان کی رقم میں سے 170 ملین روپے لاگت آئے گی۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔