دفتر خارجہ کی افغانستان میں ٹی ٹی پی کے ٹھکانوں پر حملے کے منصوبے کی تردید

افغانستان میں ٹی ٹی پی کے ٹھکانوں پر حملے کی تردید

دفتر خارجہ نے  پاکستان کے مشرقی افغانستان میں تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے خلاف فضائی حملے کرنے کی خبروں کو مسترد کر دیا ہے اور ایسے دعووں کو بالکل بے بنیاد اور بدنیتی پر مبنی قرار دیا ہے۔ 

یہ بیان ایک افغان اخبار، ہشت صبح ڈیلی کی رپورٹ کے چند گھنٹے بعد سامنے آیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ پاکستان نے صوبہ ننگرہار میں ٹی ٹی پی کے مضبوط ٹھکانوں پر فضائی حملہ کیا اور گشتہ ضلع کے آس پاس کے سلالہ محلے میں اہداف پر بمباری کی۔ 

فضائی حملوں کے دعوے بے بنیاد ہیں

 میڈیا کے سوالات کا جواب دیتے ہوئے ترجمان دفتر خارجہ ممتاز زہرہ بلوچ نے رپورٹ کو مسترد کردیا۔ ترجمان نے کہا کہ افغانستان کے صوبہ ننگرہار میں پاکستان کی جانب سے فضائی حملوں کے دعوے بے بنیاد اور بدنیتی پر مبنی تھے۔

یہ بھی پڑھیں | حکومت کا ایف آئی اے سے خواتین اداکاروں کی کردار کشی کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ

یہ بھی پڑھیں | وزیراعظم کی اسلامی تعلیمات کے فروغ کے لیے دینی مدارس کی تعریف

کلائمیٹ ریسیلینٹ پاکستان‘ کے موضوع پر بین الاقوامی کانفرنس

 قبل ازیں ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ وزیراعظم شہباز شریف اور اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوٹیرس پیر 9 جنوری کو جنیوا میں ’کلائمیٹ ریسیلینٹ پاکستان‘ کے موضوع پر بین الاقوامی کانفرنس کی مشترکہ میزبانی کریں گے۔

سیلاب متاثرین کی بحالی اور تباہ شدہ انفراسٹرکچر

 انہوں نے کہا کہ وزیراعظم سیلاب متاثرین کی بحالی اور تباہ شدہ انفراسٹرکچر کی بحالی کے لیے پاکستان کے وژن کا خاکہ پیش کریں گے۔ 

  دفتر خارجہ کے مطابق، یہ کانفرنس حالیہ تباہ کن سیلابوں کے بعد بہتر انداز میں واپسی کے لیے پاکستان کے لیے بین الاقوامی حمایت کو مارشل کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم کے طور پر کام کرے گی کیونکہ ملک ریسکیو اور ریلیف کے مرحلے سے بحالی اور تعمیر نو کی طرف منتقل ہو رہا ہے۔ 

 انہوں نے بتایا کہ کانفرنس میں سربراہان مملکت و حکومت، وزراء اور متعدد ممالک کے نمائندے اور بین الاقوامی مالیاتی اداروں، بین الاقوامی ترقیاتی تنظیموں، نجی شعبے، سول سوسائٹی اور بین الاقوامی غیر سرکاری تنظیمیں (آئی این جی اوز) شرکت کریں گی۔

ثاقب شیخ

ثاقب شیخ فاؤنڈیشن فار ڈیفنس آف ڈیموکریسیز کے ایک ریسرچ فیلو ہیں، جو واشنگٹن میں قائم، قومی سلامتی اور خارجہ پالیسی پر توجہ مرکوز کرنے والا غیر جانبدارانہ تحقیقی ادارہ ہے۔