خیبر پختونخواہ وزیر قانون نے ویڈیو وائرل ہونے پر استعفی دے دیا

خیبر پختونخواہ (کے پی) کے وزیر قانون سلطان خان نے منگل کو صوبائی کابینہ سے استعفیٰ دے دیا ، جس کے چند منٹ بعد وزیراعلیٰ نے ٹویٹ کیا کہ انہوں نے سوشل میڈیا پر ان کی پیسے وصول کرتے ہوئے وائرل ویڈیو پر ایسا کرنے کو کہا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ویڈیو  پی ٹی آئی کے آفیشل اکاؤنٹ کے ذریعے ٹویٹر پر شیئر کی گئی۔ اس ویڈیو میں کچھ پارلیمنٹیرینز کو بیٹھے ہوئے 2018 میں سینیٹ انتخابات سے قبل مبینہ طور پر نقد رقم کے ڈھیر گنتے ہوئے دکھایا۔

یہ بھی پڑھیں | پاک فوج کو سیاست میں زبردستی نا گھسیٹا جائے، ڈی جی آئی ایس پی آر

کے پی کے وزیر اعلی محمود خان کو  لکھے گئے استعفیٰ کے خط میں سلطان خان نے بتایا کہ انہیں لگتا ہے کہ ان کا اخلاقی فرض اور ذمہ داری ہے کہ وہ کابینہ سے دستبردار ہوجائیں اور اپنا استعفیٰ پیش کریں۔ انہوں نے اس امید کا بھی اظہار کیا کہ انصاف ہوگا اور وہ اپنا نام صاف کرنے میں کامیاب ہوجائیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم کے ویژن کے مطابق ہم اس صوبے میں احتساب اور شفافیت کے اعلی ترین معیار کو برقرار رکھیں گے۔

یاد رہے کہ 2018 میں ، تحریک انصاف نے اپنے 20 ممبروں کو انویسٹی گیشن کمیٹی کے ذریعہ 2018 سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ کے لئے 50 ملین روپے قبول کرنے کا مجرم پائے جانے کے بعد ان کو اسمبلی سے نکال دیا تھا۔ 

گذشتہ ماہ ساہیوال میں تقریر کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے یہ بھی کہا تھا کہ ایوان بالا کے آخری انتخابات کے دوران پی ٹی آئی سے تعلق رکھنے والے خیبر پختونخوا اسمبلی کے 20 ممبروں کو کچھ امیدواروں کے حق میں ووٹ دینے کے لئے پچاس لاکھ روپے دیئے گئے تھے۔ 

اس سے قبل ہی وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی ، ترقیات اور خصوصی اقدامات اسد عمر نے ایک پریس کانفرنس میں سینیٹ کے انتخابی عمل میں اصلاحات کی ضرورت پر زور دینے کے لئے اسی ویڈیو کا حوالہ دیا تھا۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x