حکومت کی براڈ شیٹ کے زریعے نواز شریف سے 1بلین ڈالر وصول کرنے کی کوشش

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت اور ایسٹس ریکوری فرم براڈشیٹ کے مابین ایک مجوزہ معاہدہ ہوا ہے جو کہ پاکستانی حکام کی جانب سے مطالبہ کیے جانے والء “کٹوتیوں” کے تنازع کی نذر ہو گیا ہے۔ 

 تفصیلات پر مشتمل دستاویز کے مطابق ، حکومت سابق وزیر اعظم نواز شریف کے سنگاپور کے بینک اکاؤنٹ میں مبینہ طور پر رکھے ہوئے ایک بلین ڈالر کی وصولی کے لئے براڈشیٹ کو شامل کرنے کی کوشش کر رہی تھی۔ تاہم ، یہ معاہدہ اس وقت تنازع کا شکار ہو گیا جب براڈشیٹ نے پاکستانی عہدیداروں کے ’کٹوتیوں‘ کے مطالبے کی مخالفت کی۔ 

یہ دستاویز  براڈ شیٹ کے ساتھ منسلک ایک قانون فرم ، کرویل اینڈ مورنگ اور پاکستان کی نمائندگی کرنے والی ایک قانونی فرم ایلن اینڈ اووری نے تیار کی تھیں۔ دستاویز کے مطابق ، بروڈشیٹ کے مالک کاوہ موسوی سے ایک سید ظفر علی نے 2019 کے موسم گرما میں رابطہ کیا گیا تھا۔ جولائی 2019 میں آکسفورڈ میں منعقدہ ایک میٹنگ میں ، ظفر علی نے کاوہ موسوی کو بتایا تھا کہ وہ وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر عمل کر رہے ہیں۔ 

دستاویز میں لندن اور اسلام آباد میں ہونے والی متعدد میٹنگوں کی تفصیلات فراہم کی گئی ہیں۔ اس میں شامل تمام فریقین، کاہح موسوی ، وزیر اعظم کے مشیر شہزاد اکبر اور علی نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ واقعی بات چیت ہوئی ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | براڈشیٹ انکشافات سے حکمران طبقے کی بدعنوانی کا انکشاف ہوا، وزیر اعظم عمران خان

دستاویز میں دعوی کیا گیا ہے کہ برطانوی پاکستانی ظفر علی نے وزیر اعظم عمران خان اور اس وقت کے وزیر خزانہ اسد عمر ، شہزاد اکبر اور کچھ دیگر اعلی عہدیداروں سے ملاقات کی۔ 

انہوں نے کاوہ موسوی کو یہ بھی بتایا کہ حکومت میں ان کا قریبی رابطہ اسد عمر سے ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ میں نے پہلے ہی کی ہوئی ملاقاتوں سے ، میں نے دیکھا کہ عمران خان اسد عمر کے علاوہ کسی پر بھروسہ نہیں کرتے ہیں۔

 شہزاد اکبر نے تصدیق کی ہے کہ انہوں نے ظفر علی سے ملاقات کی۔ وزیر اعظم کے احتساب کے مشیر نے مزید کہا کہ ظفر علی کے پاس ایک تجویز تھی جو قبول نہیں کی گئی تھی۔ بہت سے لوگ لمبے لمبے دعوے اور بڑی تجاویز کے ساتھ حکومت سے رجوع کرتے ہیں۔ ہم دوسری حکومتوں کے ساتھ تعاون کے ذریعے متعدد معاملات پر کام کر رہے ہیں۔ ہمیں کسی کی نوکری لینے کی ضرورت نہیں ہے۔ 

کاوہ موسوی نے نجی نیوز کو بتایا کہ یہ ملاقاتیں ہوئی ہیں اور انہوں نے مزید کہا کہ اب وہ ظفر علی کے ساتھ بات چیت کرنے کے پابند نہیں ہیں۔ نجی نیوز کے ذریعہ جب رابطہ کیا گیا تو ظفر علی نے تصدیق کی کہ براڈشیٹ کے سلسلے میں لندن میں کچھ ملاقاتیں ہوئی ہیں لیکن انہوں نے مزید تفصیلات بتانے سے انکار کردیا۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔