حکومت میں نا رہا تو زیادہ خطرناک ہو جاؤں گا، وزیر اعظم عمران خان

 پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کے روز اپوزیشن جماعتوں کو خبردار کیا ہے کہ اگر وہ انہیں استعفیٰ دینے پر مجبور کریں گے تو وہ زیادہ خطرناک ہوں گے کیونکہ انہوں نے انہیں کسی قسم کی رعایت دینے سے انکار کیا ہے۔

 پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کی جانب سے 23 مارچ کو عوام کی لائیو کالز کے دوران لانگ مارچ کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں عمران خان نے کہا کہ یہ اقدام ناکام ہو جائے گا۔ 

عمران خان نے کہا ہے کہ اگر میں سڑکوں پر نکلوں گا، تو آپ (اپوزیشن جماعتوں) کو چھپنے کی کوئی جگہ نہیں ملے گی۔

  انہوں نے مزید کہا کہ اگر استعفیٰ دینے پر مجبور کیا گیا تو وہ زیادہ خطرناک ہوں گے۔ 

 پی ڈی ایم کا اتحاد سیاست میں پاک فوج کی مداخلت اور “جوڑ توڑ” انتخابات کے ذریعے “کٹھ پتلی” وزیر اعظم عمران خان کو لانے کے خلاف بنایا گیا تھا۔ 

 پی ڈی ایم کے صدر اور جمعیت علمائے اسلام-ایف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اعلان کیا ہے کہ اپوزیشن جماعتیں 23 مارچ کو اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ کریں گی تاکہ قوم کو عمران خان کی “نااہل اور ناجائز” حکومت سے نجات دلائی جائے۔ 

یہ بھی پڑھیں | رانا شمیم کے طرز عمل سے عدالت کی بدنامی ہوئی، چارج شیٹ جاری

عمران خان نے قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا اور ان کے ساتھ کسی قسم کی بات چیت سے انکار کردیا۔

 انہوں نے کہا کہ مجھے شہباز شریف سے ملاقات نہ کرنے پر بلایا جاتا ہے کیونکہ وہ اپوزیشن لیڈر ہیں۔ (لیکن) میں انہیں قوم کے مجرم کے طور پر دیکھتا ہوں۔ 

 انہوں نے پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے سربراہ پر الزامات کا جواب نہ دے کر کرپشن کے مقدمات سے بچنے کا الزام لگایا۔ 

عمران خان نے کہا کہ پورا شریف خاندان لندن فرار ہو جائے گا جہاں نواز شریف اور ان کے دونوں بیٹے پہلے ہی رہ رہے ہیں۔ 

نواز شریف کی ممکنہ واپسی کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ “براہ کرم واپس آجائیں، ہم آپ کا انتظار کر رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ وہ واپس نہیں آئیں گے، انہیں پیسے سے پیار ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔