حکومت اپنی مدت پوری کرے گی، اتحادی جماعتوں کا اعلان

پنجاب کے ضمنی انتخابات میں پی ٹی آئی کی شاندار کامیابی سے بے نیاز، مسلم لیگ (ن) کی زیرقیادت اتحادی جماعتوں نے منگل کو وفاقی حکومت کی آئینی مدت ختم ہونے سے پہلے انتخابات میں حصہ نہ لینے اور معیشت کو درست راستے پر ڈالنے کے لیے اقدامات کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

پنجاب کا نیا وزیر اعلیٰ بننے کی کوشش میں رکاوٹ ڈالنے کا فیصلہ

  وزیر اعظم شہباز شریف کی ماڈل ٹاؤن رہائش گاہ پر جمع ہونے والے پی ڈی ایم رہنماؤں نے بھی چوہدری پرویز الٰہی کے پنجاب کا نیا وزیر اعلیٰ بننے کی کوشش میں رکاوٹ ڈالنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس اہم جلسے میں وزیر اعظم شہباز شریف، پیپلز پارٹی کے سربراہ آصف علی زرداری، مولانا فضل الرحمان اور پی ڈی ایم جماعتوں کی دوسری صف کی قیادت نے شرکت کی۔

 ایم کیو ایم کی جانب سے خالد مقبول اور وسیم اختر نے جبکہ طارق بشیر چیمہ، افتخار حسین اور شاہ زین بگٹی نے اپنی اپنی جماعتوں کی جانب سے اظہار خیال کیا۔

یہ بھی پڑھیں | عمران خان نے چیف الیکشن کمیشنر کے استعفی کا مطالبہ کر دیا

یہ بھی پڑھیں | ضمنی انتخابات: تحریک انصاف نے تاریخی فتح حاصل کر لی

 اتحادی رہنماؤں نے پنجاب اسمبلی کی 20 نشستوں پر حالیہ ضمنی انتخابات میں پی ٹی آئی کی بھاری اکثریت سے کامیابی کے بعد ابھرتے ہوئے سیاسی منظر نامے پر طویل بحث کی۔ انہوں نے پنجاب میں قبل از وقت انتخابات اور نئی حکومت کی تشکیل کے فوائد اور نقصانات پر بھی بحث کی۔

 میٹنگ سے باخبر ذرائع نے بتایا کہ پی ڈی ایم کی قیادت نے متفقہ رائے کا اظہار کیا کہ انہیں قبل از وقت انتخابات میں نہیں جانا چاہیے کیونکہ عوام کی رائے مہنگائی اور ڈالر کے مقابلے میں روپے کی گرتی ہوئی کمی کی وجہ سے موجودہ نظام کے خلاف ہے۔ پوری قیادت نے اتفاق کیا کہ قبل از وقت انتخابات کے نتائج حالیہ ضمنی انتخابات سے مختلف نہیں ہوں گے۔ 

 اجلاس میں پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان کی آگے کی نقل و حرکت کو روکنے کے حوالے سے حکمت عملی بھی مرتب کی گئی اور سیاسی بساط پر ان کی تمام چالوں کے خلاف دانت اور ناخن سے لڑنے کا فیصلہ کیا گیا۔ رہنماؤں نے سیاسی ردعمل کے خوف کے بغیر گرتی ہوئی معیشت کو ٹھیک کرنے کے لیے تمام ضروری اقدامات کرنے کا فیصلہ کیا۔ 

ذرائع کا کہنا ہے کہ پی ڈی ایم کی قیادت نے سب سے بڑے صوبے کو پی ٹی آئی کے ہاتھ میں جانے سے روکنے کی حکمت عملی پر بھی غور کیا۔ انہوں نے ضمنی انتخابات میں مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کی شکست تسلیم کرنے کے باوجود اس آپشن پر غور کیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں