حنیف عباسی کو معاون خصوصی وزیر اعظم کے طور پر کام کرنے سے روک دیا گیا

رپورٹ کے مطابق، اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) نے منگل کو مسلم لیگ (ن) کے رہنما حنیف عباسی کو سماعت کی اگلی تاریخ تک وزیر اعظم (ایس اے پی ایم) شہباز شریف کے معاون خصوصی کے طور پر کام کرنے سے روک دیا ہے۔

فیصلہ سناتے ہوئے، اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ امید ہے کہ حنیف عباسی سماعت کی اگلی تاریخ تک معاون خصوصی وزیر اعظم کے طور پر اپنے فرائض سرانجام نہیں دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اگر کوئی مجرم ہے تو وہ عوامی عہدہ نہیں رکھ سکتا۔

 جواب میں، احسن بھون ایڈووکیٹ، جنہوں نے کیس میں مسلم لیگ ن کے رہنما کی نمائندگی کی، نے کہا کہ وہ عدالت کو مطمئن کرنے کی کوشش کریں گے کہ ایس اے پی ایم کا دفتر دیگر سرکاری دفاتر کی طرح نہیں ہے۔ 

 لیکن چیف جسٹس اطہر من اللہ نے جواب دیا کہ ایس اے پی ایم کا دفتر دیگر سرکاری دفاتر سے مختلف نہیں ہے۔ 

 ایڈوکیٹ بھون نے ان سے درخواست کی کہ ایسا کوئی حکم نہ دیا جائے، جو بعد میں فیصلہ بن گیا۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے بتایا کہ معاون خصوصی کا کام مشورہ دینا ہے، جو وہ بغیر کسی اطلاع کے بھی دے سکتا ہے۔

 اس کے بعد عدالت نے کیس کی سماعت 27 مئی 2022 تک ملتوی کر دی۔

یہ بھی پڑھیں | شیخ رشید: الیکشن کروانے ہیں یا گرفتاریاں، فیصلہ کر لیں 

 تین روز قبل 14 مئی کو وفاقی حکومت نے پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے رہنما حنیف عباسی کی بطور وزیراعظم کے معاون خصوصی تقرری کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) میں دائر درخواست کا ابتدائی جواب جمع کرایا تھا۔ 

 اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کی جانب سے بھیجے گئے جواب میں عدالت کو بتایا گیا کہ حنیف عباسی کو بطور ایس اے پی ایم تعینات کرنے کے فیصلے پر نظرثانی کا حکم وزیراعظم شہباز شریف کو دے دیا گیا ہے۔ 

عدالت کو بتایا گیا کہ وزیراعظم کی جانب سے اس حوالے سے ہدایات ملنے پر تفصیلی جواب جمع کرایا جائے گا۔ 

 پانچ روز قبل، 9 مئی 2022 کو، اسلام آباد ہائی کورٹ نے درخواست کو مسترد کرتے ہوئے، حنیف عباسی کو وزیر اعظم شہباز شریف کے معاون خصوصی کے طور پر کام کرنے سے روکنے کا عدالتی حکم طلب کرتے ہوئے، مؤخر الذکر کو اپنے فیصلے پر نظرثانی کرنے کو کہا تھا۔ 

 سابق وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے درخواست دائر کی تھی جس میں انہوں نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ مسلم لیگ ن کے رہنما کو وزیراعظم شہباز شریف کے معاون خصوصی کے طور پر کام کرنے سے روکا جائے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں