حمزہ اور شہباز شریف کو فرد جرم کے لئے طلب کر لیا گیا

ارب روپے کی منی لانڈرنگ کیس

  لاہور کی خصوصی عدالت نے ہفتے کے روز 16 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کیس میں وزیر اعظم شہباز شریف اور ان کے صاحبزادے حمزہ شہباز پر فرد جرم عائد کرنے کے لیے 7 ستمبر کی تاریخ مقرر کر دی ہے۔ 

 آج کی سماعت کے آغاز پر خصوصی عدالت (سنٹرل ون) نے شہباز شریف، ان کے صاحبزادے حمزہ شہباز اور دیگر شریک ملزمان کو مقدمے میں فرد جرم عائد کرنے کے لیے آئندہ سماعت پر طلب کر لیا۔ 

 اس دوران عدالت نے کیس کی سماعت آئندہ سماعت تک ملتوی کر دی ہے۔

 “کرپشن کا کوئی ثبوت نہیں ملا” 

13 جون کو خصوصی عدالت نے مشاہدہ کیا کہ میگا منی لانڈرنگ کیس میں وزیراعظم شہباز شریف اور ان کے صاحبزادے حمزہ شہباز کے خلاف اب تک ریکارڈ پر کرپشن، اختیارات کے ناجائز استعمال اور رشوت ستانی کا کوئی ثبوت نہیں ملا۔ 

ان کی قبل از گرفتاری ضمانت کی توثیق کے لیے تحریری حکم نامے میں، عدالت نے کہا کہ وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) وزیر اعظم شہباز اور وزیراعلیٰ حمزہ کو قومی احتساب بیورو (نیب) کے مقدمات میں ضمانت حاصل کرنے کے بعد گرفتار کرنا چاہتی ہے۔

 ایف آئی اے کی جانب سے وزیراعظم اور حمزہ کے خلاف دائر 16 ارب روپے کی منی لانڈرنگ کیس کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت نے گزشتہ ہفتے دونوں کی ضمانت قبل از گرفتاری منظور کی تھی۔ 

یہ بھی پڑھیں | پنجاب اسمبلی: دوست محمد مزاری کے خلاف تحریک عدم پر ووٹنگ آج ہو گی

یہ بھی پڑھیں | صرف جلد الیکشن سے ہی معاشی صورتحال بہتر ہو سکتی ہے، عمران خان

 آرڈر میں کہا گیا ہے کہ ” بدعنوانی، سرکاری اختیارات کے غلط استعمال، کک بیکس، اور کمیشن کے بارے میں الزامات کو مقدمے کی سماعت کے دوران مزید تحقیقات کی ضرورت ہے کیونکہ اس مرحلے پر ٹھوس ثبوت دستیاب نہیں ہیں۔

 حکم نامے میں کہا گیا کہ تفتیشی دفتر نے آج تک اپنی ڈائری میں یہ ذکر نہیں کیا ہے کہ درخواست گزاروں کو مزید تفتیش کے لیے حراست میں رکھنے کی ضرورت تھی۔ 

 خصوصی عدالت نے درخواست گزاروں کو ضمانت دینے کے اپنے فیصلے کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ کیس کی تفتیش مکمل ہو چکی ہے اور چارج شیٹ بھی جمع کر دی گئی ہے، اس لیے گرفتاریوں کی ضرورت نہیں ہے۔ 

حکم نامے میں کہا گیا کہ کیس میں ریکارڈ کیے گئے 64 افراد کے بیانات – جنہوں نے رقوم جمع کرائی تھیں – کا تعلق 60.7 ملین روپے سے ہے نہ کہ 16 ارب روپے – جیسا کہ ایف آئی اے نے دعویٰ کیا ہے۔ 

 اس میں مزید کہا گیا کہ 64 ڈپازٹرز کے بیانات میں کسی نے بھی وزیراعظم اور وزیراعلیٰ کا نام نہیں لیا۔ 

مزید برآں، کہے گئے بیانات میں رشوت، کک بیکس، یا کمیشن وغیرہ کی کوئی علامت نہیں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں