حلف نامہ درست ہے تاہم اسےشائع نہیں کرنا تھا، رانا شمیم وکیل

 گلگت بلتستان  گلگت بلتستان

گلگت بلتستان کے سابق چیف جسٹس رانا شمیم

​​کے وکیل نے منگل کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں اس بات کی تصدیق کی کہ ان کے موکل سے منسوب بیان حلفی کا مواد – جس میں انہوں نے سابق جیورسٹ میاں ثاقب نثار پر مسلم لیگ (ن) کی اعلیٰ قیادت کی ضمانتیں مسترد کرنے کے لیے ملی بھگت کا الزام لگایا تھا۔  واقعی درست ہیں۔

 تاہم انہوں نے مزید کہا کہ حلف نامہ شائع نہیں ہونا تھا۔ ۔

تفصیلات کے مطابق 30 نومبر کو ہونے والی پچھلی سماعت کے دوران، عدالت نے رانا شمیم ​​کو اصل حلف نامہ جمع کرانے کی ہدایت کی تھی جس کا سابق جج نے دعویٰ کیا تھا کہ وہ برطانیہ میں ان کے اہل خانہ کے ساتھ ہے  اور ساتھ ہی اس کا جواب بھی چار دن کے اندر جمع کرایا جائے۔ 

 سماعت میں رانا شمیم، تحقیقاتی رپورٹ کے مصنف انصار عباسی اور دی نیوز کے ایڈیٹر عامر غوری کے علاوہ اٹارنی جنرل خالد جاوید خان اور اسلام آباد کے ایڈووکیٹ جنرل نیاز اللہ خان نیازی عدالت میں موجود تھے۔ جنگ گروپ کے ایڈیٹر انچیف میر شکیل الرحمان کے وکیل نے استثنیٰ کی درخواست دائر کر دی۔ 

یہ بھی پڑھیں | مریم نواز کے وزیر اعظم کے لئے نامناسب الفاظ کے بعد سوشل میڈیا صارفین برہم   

 ‘لیک’ ہونے والے حلف نامے میں رانا شمیم ​​نے مبینہ طور پر کہا تھا کہ سابق چیف جسٹس نے گلگت کے دورے کے دوران اسلام آباد ہائی کورٹ کے ایک جج کو فون کیا اور ان سے کہا کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ نواز اور ان کے بیٹی کو 25 جولائی 2018 کے عام انتخابات سے قبل ضمانت پر رہا نہیں کیا جائے گا۔ 

مبینہ حلف نامہ دی نیوز انٹرنیشنل کی ایک تحقیقاتی رپورٹ کے حصے کے طور پر شائع کیا گیا تھا۔ 

جسٹس من اللہ نے بعد ازاں رپورٹ کا نوٹس لیا تھا اور بعد ازاں عباسی، رحمان، غوری اور شمیم ​​کو توہین عدالت آرڈیننس کے تحت شوکاز نوٹس جاری کیے تھے۔ 

عباسی، رحمان اور غوری نے گزشتہ ہفتے سماعت سے پہلے ہی عدالت میں اپنے جوابات جمع کرائے تھے لیکن رانا شمیم ​​نے یہ نہیں کہا تھا کہ اس نے ابھی حلف نامے کی تصدیق کرنی ہے۔ 

 آج کی سماعت کے آغاز پر، جسٹس من اللہ نے کہا کہ رانا شمیم ​​نے کہا تھا کہ انہوں نے اپنا بیان حلفی میڈیا کو نہیں دیا تو کیا یہ صحافتی معیار ہیں کہ ایسی رپورٹیں شائع کی جاتی ہیں؟

جسٹس من اللہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ رپورٹ میں ججوں کے خلاف الزامات لگانے کا بیانیہ بنایا گیا ہے۔ عدلیہ کے ارکان اپنا موقف پیش کرنے کے لیے پریس کانفرنس نہیں کر سکتے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ججوں پر اس طریقے سے دباؤ ڈالا جا رہا ہے۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ اس عدالت کے معزز ججوں کے نام لیے گئے جو اس وقت ملک میں موجود نہیں تھے، رانا شمیم ​​نے تین سال بعد حلف نامہ کیوں لکھا؟ یہ کسی مقصد کے لیے ہونا چاہیے۔

عوام کو یہ تاثر دیا گیا کہ چیف جسٹس اس عدالت کے ججوں پر دباؤ ڈالتے ہیں۔ کہانی کی اشاعت کا وقت اہم ہے کیونکہ ایون فیلڈ ریفرنس میں مریم نواز کی سزا کے خلاف اپیل پر سماعت جاری ہے۔

 جسٹس من اللہ نے کہا کہ رانا شمیم ​​نے کہا کہ انہوں نے اپنا بیان حلفی میڈیا کو نہیں دیا جبکہ مقدمات سے متعلق حلف نامے عدالتوں میں جمع کرائے گئے۔ 

 انہوں نے کہا کہ مجھے اپنے تمام ججوں پر فخر ہے اور ان پر بھروسہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عدالت کسی کو بھی عدلیہ پر عوام کے اعتماد کو ٹھیس پہنچانے کی اجازت نہیں دے گی۔ 

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔