حقیقی آزادی کی تحریک 24 ستمبر سے شروع ہو گی، عمران خان

حقیقی آزادی کی تحریک 24 ستمبر سے شروع ہو گی

پی ٹی آئی کے چیئرمین اور معزول وزیر اعظم عمران خان نے بدھ کے روز اعلان کیا کہ ان کی پارٹی کی تحریک حقیقی آزادی 24 ستمبر سے شروع ہوگی اور انہوں نے اس میں ملک کی قانونی برادری کی شرکت کی خواہش کی ہے۔

 لاہور میں آل پاکستان لائرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان نے کہا کہ ملک تیزی سے شہری بدامنی کی طرف بڑھ رہا ہے۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ اگر ملک کو “درآمد شدہ” حکومت کی پیدا کردہ موجودہ معاشی دلدل سے نہ نکالا گیا تو انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) اور ورلڈ بینک پہلے ہی پاکستان میں سری لنکا جیسی صورتحال سے خبردار کر چکے ہیں۔ 

کارکن وعدہ کریں سڑکوں پہ آئیں گے

عمران خان نے وکلاء سے کہا کہ وہ ان سے وعدہ کریں کہ وہ ان کی کال پر سڑکوں پر آئیں گے۔ 

 انہوں نے کہا کہ ملک میں قانون کی حکمرانی کے لیے وکلاء برادری کے کندھوں پر بڑی ذمہ داری ہے۔ 

ملک میں جنگل کا قانون ہے

انہوں نے کہا کہ اس وقت ملک میں جنگل کا قانون ہے۔ قانون نافذ کرنے والے ادارے، جو قانون کو نافذ کرنے کے ذمہ دار ہیں، اسے توڑ رہے ہیں۔

 انہوں نے مزید کہا کہ ’امپورٹڈ‘ حکمران صرف اپنی لوٹی ہوئی دولت بچانے کے لیے صحافیوں، دانشوروں، سوشل میڈیا ایکٹوسٹ اور دیگر مخالف آوازوں کو خاموش کرنے کے لیے ریاستی مشینری کا استعمال کر رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں |   رانا ثناء اللہ ایم کیو ایم لیڈر شپ سے آج ملاقات کریں گے

یہ بھی پڑھیں |  الیکشن کمیشن کی خیبر پختونخواہ میں ضمنی الیکشن ملتوی کرنے کی دھمکی

 پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان نے دعویٰ کیا کہ انہوں نے دنیا کے کسی بھی جمہوری ملک میں ایسی صورتحال کبھی نہیں دیکھی جہاں ملک کی اہم ترین تقرری – آرمی چیف – اور قومی سلامتی کے بارے میں فیصلے ایک مفرور اور سزا یافتہ مجرم ( نواز شریف)  کی مشاورت سے کیے جارہے ہوں۔

میں نے کبھی نہیں دیکھا کہ عام شہریوں کو نامعلوم نمبروں سے فون کالز کے ذریعے دھمکیاں دی جاتی ہوں۔ یہ گروپ آزادانہ طور پر کام کر رہا ہے اور گھوم رہا ہے۔

ڈرانے والوں کو ڈرانے کی ضرورت ہے

 عمران خان نے کہا کہ دوسروں کو ڈرانے کی جرات کرنے والوں کو ڈرانے کی ضرورت ہے کیونکہ آزادی اظہار پاکستان کے ہر شہری کا بنیادی حق ہے۔ 

 انہوں نے دعویٰ کیا کہ ان کے ساتھی شہباز گل کو حراست میں وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنایا گیا تاکہ دوسروں کے لیے مثال قائم کی جا سکے۔ 

عمران خان نے مزید کہا کہ شہباز گل ایک امریکی یونیورسٹی میں اسسٹنٹ پروفیسر تھے اور وہ نہ تو دہشت گرد ہیں اور نہ ہی سخت گیر مجرم بلکہ انہیں غیر انسانی طریقے سے مارا گیا۔ 

پاکستان میں قانون کی حکمرانی نہیں

یہ کسی بھی مہذب ریاست میں ممکن نہیں ہے لیکن یہ پاکستان ہے کیونکہ یہاں قانون کی حکمرانی نہیں ہے۔

پء ٹی آئی کے سربراہ نے دعویٰ کیا کہ بااثر اور کمزور کے لیے انصاف کے دو متوازی نظام ہیں۔

 انہوں نے مزید کہا کہ سیاسی مخالفین کے خلاف جھوٹے مقدمات درج کیے جا رہے ہیں۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ ملک کی غذائی تحفظ خطرے میں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔