حساس معلومات کا تبادلہ واٹس ایپ پر نا کریں، نینشل آئی ٹی بورڈ

قومی انفارمیشن ٹکنالوجی بورڈ نے کہا ہے کہ واٹس ایپ کی نئی پرائیویسی پالیسی نافذ ہونے کے بعد ، وہ صارفین کے ڈیٹا کو فیس بک کے ساتھ شیئر کرے گی۔ 

آٹھ فروری کے بعد واٹس ایپ کی پالیسی اپڈیٹ کے بعد قومی انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ نے بتایا ہے کہ کسی بھی قیمت پر واٹس ایپ کے ذریعے حساس معلومات / دستاویزات کا اشتراک نہیں کریں کیونکہ لوگوں کو اپنی خدمات کا استعمال جاری رکھنے کے لئے واٹس ایپ صارفین کو نئی شرائط سے اتفاق کرنا پڑے گا۔

این آئی ٹی بی نے مزید کہا کہ شئیر کی جانے والی معلومات میں صارف کا ایڈریس ، آئی پی ایڈریس ، فون اور نیٹ ورک آپریٹر کی تفصیلات ، مالیاتی لین دین اور ادائیگی شامل ہیں۔

یاد رہے کہ کیلیفورنیا میں مقیم واٹس ایپ نے چار جنوری کو کہا تھا کہ اس نے فیس بک اور اس کے انسٹاگرام اور میسنجر جیسی ایپس کے ساتھ لوکیشن اور فون نمبر سمیت کچھ ڈیٹا شیئر کرنے کا حق محفوظ رکھا ہے۔ اس اقدام کے نتیجے میں دنیا بھر کی حکومتیں ڈیٹا شیئرنگ کے مضمرات کی تحقیقات کرنے لگی ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | حمزہ علی عباسی کی بہن کی ارتغرل اسٹارز نورٹین سنمیز اور آئبرک پیکن کے ساتھ ملاقا کی۔

دریں اثنا ، میسجنگ ایپ کے اس اقدام کے جواب میں ، وفاقی وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی امین الحق نے جمعہ کو کہا کہ اسمارٹ آفس کے نام سے ایک واٹس ایپ متبادل تیار کیا جارہا ہے اور فی الحال وہ ٹیسٹنگ کے مرحلے میں ہے۔

اس کے علاوہ  آئی ٹی وزیر نے کہا کہ اگر اس کی منظوری دی جاتی ہے تو ، اس ایپ کو سرکاری عہدیداروں اور ملازمین استعمال کریں گے۔ 

نجی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ ایپ جون 2021 تک جاری کی جائے گی۔ تمام شہریوں کے استعمال کے لئے اسی طرح کی ایپ تیار کی جارہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ صارف کے ڈیٹا اور مواصلات کے ریکارڈ کو مکمل تحفظ فراہم کرے گی۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ وزارت نے ذاتی ڈیٹا پروٹیکشن بل 2020 تیار کیا ہے جسے وفاقی کابینہ کے سامنے پیش کرنے سے قبل وزارت قانون کو قانونی جائزہ لینے کے لئے بھیجا جائے گا۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x