مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

جنید صفدر کے نکاح کے دوران ہوٹل کے باہر مظاہرہ

جنید صفدر اور عائشہ سیف کی لندن کے فائیو اسٹار لینسبرو ہوٹل میں نکاح کی تقریب منعقد ہوئی جس دوران ایک ناخوشگوار واقعہ بھی پیش آیا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سربراہ میاں نواز شریف سیاہ رنگ کی مرسڈیز بینز ایس یو وی میں سیکورٹی کے ساتھ محفوظ مقام پر پہنچے اور پھر آسانی سے ہوٹل داخل ہو گئے۔ اس دوران ہوٹل کے باہر ،  پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چند درجن کارکنوں نے نواز شریف کے خلاف نعرے لگائے اور پلے کارڈز اٹھا کر تقریب میں خلل ڈالنے کی کوشش کی۔ 

ویڈیوز وائرل ہونے کے بعد پی ٹی آئی اور مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں کے درمیان گرما گرم تبادلے کے مناظر سوشل میڈیا پر آنا شروع ہو گئے۔ ایک ویڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ ایک مسلم لیگ (ن) کا کارکن پہلے پی ٹی آئی کی خاتون سے التجا کر رہا ہے کہ وہ کوئی تو موقع چھوڑ دے۔

 ویڈیو کے پس منظر میں “وزیر اعظم نواز شریف” کے نعرے سنے جا سکتے ہیں۔ پی ٹی آئی کے کارکن کو بالآخر جائے وقوعہ پر موجود دیگر لوگوں نے منتشر ہونے پر مجبور کر دیا جن میں سے بہت سے لوگوں نے نواز شریف کی تصاویر اٹھا رکھی تھیں۔ 

ایک اور ویڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ ایک بڑا مجمع مسلم لیگ این گیٹ گیٹ پر جمع ہے۔ انہوں نے پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن میں کہا گیا تھا کہ کیا پاکستان کے قومی خزانے سے پیسے شادی کے اخراجات پورے کرنے کے لیے استعمال کیے گئے ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | کشمیری پریمیئر لیگ: باگ سٹائل آج کوٹلی شیروں کا سامنا کریں گے 

ایک تیسری ویڈیو میں دیکھا گیا ہے کہ پی ٹی آئی کے لوگ ہوٹل سے پیچھے ہٹ رہے ہیں کیونکہ انہیں گارڈز منتشر کر رہے ہیں۔ ان کا تعاقب پی ایم ایل این کے کارکنوں نے “وزیر اعظم نواز شریف” کے نعرے لگاتے ہوئے کیا۔ ایسا معلوم ہوا کہ مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں نے اپنے پی ٹی آئی حریفوں کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ 

جنید صفدر ، مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر اعوان کے دونوں والدین شادی میں شرکت سے قاصر تھے کیونکہ وہ برطانیہ میں نہیں تھے۔

یاد رہے کہ زیادہ تر ویڈیوز صحافی مرتضی علی شاہ نے ٹویٹ کی ہیں جو لندن میں پاکستان سے متعلقہ واقعات کی گہرائی سے کوریج کے لیے مشہور ہیں۔ اس نے ایک ٹیکسی ڈرائیور کے بارے میں اطلاع دی جس نے کافی طوفان برپا کیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔