تحریک انصاف کے رہنما قاسم شوری پر شاہ زین بگٹی کے گارڈز نے حملہ کر دیا

شاہ زین بگٹی کے مبینہ گارڈز نے گزشتہ رات اسلام آباد میں پی ٹی آئی رہنما قاسم سوری پر حملہ کیا ہے۔

قاسم سوری کا دعویٰ ہے کہ وہ اپنے دوستوں کے ساتھ اسلام آباد میں رات کو ایک ہوٹل میں سحری کے لیے نکلے ہوئے تھے کہ چند افراد نمودار ہوئے اور ان پر حملہ کیا۔ 

قاسم سوری نے دعویٰ کیا کہ یہ افراد شاہ زین بگٹی کے محافظ تھے۔ یہ واقعہ چند گھنٹے بعد اس وقت پیش آیا جب شاہ زین بگٹی حکومتی وفد کے ہمراہ مدینہ منورہ میں مسجد نبوی پہنچے جہاں پاکستانی زائرین نے ان کے ساتھ بدتمیزی کی اور بدتمیزی کی۔

یہ بھی پڑھیں | آئیے کراچی کی بہترین فوڈ سٹریٹ کی سیر کریں

حکومتی وفد نے مسجد میں ہنگامہ آرائی کا الزام پی ٹی آئی پر لگایا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کی قیادت لوگوں کو اپنے خلاف بھڑکا کر معاشرے میں تشدد کو ہوا دے رہی ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ ہوٹل کی انتظامیہ بشمول ویٹر اور ہوٹل کے دیگر صارفین نے شاہ زین بگٹی کے گارڈز سے لڑ کر انہیں بچایا۔

 حملے کی ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ قاسم سوری اور ان کے دوستوں پر گارڈز کی جانب سے مبینہ طور پر کرسیاں پھینکی گئیں۔ سوری نے ان کے ساتھ کھڑے ہونے پر لوگوں کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ عوام نے موجودہ حکومت کو مسترد کر دیا ہے جو مبینہ طور پر غیر ملکی سازش کے ذریعے لائی گئی ہے۔ 

 قاسم سوری نے تحریک عدم اعتماد کو ختم کرنے کی کوشش میں اہم کردار ادا کیا تھا۔ انہوں نے قومی اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد مسترد کر دی تھی۔ بعد ازاں انہوں نے پاکستان کی قومی اسمبلی کے ڈپٹی سپیکر کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں