تازہ ترین: ڈالر کے مقابلے میں روپیہ 204 کا ہو گیا

  پاکستانی روپیہ آج پیر کو دوپہر سے پہلے انٹربینک مارکیٹ میں امریکی ڈالر کے مقابلے میں کم از کم 1.75 روپے گر کر 204.10 روپے تک پہنچ گیا ہے۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) کے مطابق جمعہ کو ڈالر کے مقابلے روپیہ 202.35 روپے پر بند ہوا تھا۔ 

 اسی طرح پاکستان اسٹاک ایکسچینج صبح 784 پوائنٹس کی کمی سے 41,231 پوائنٹس پر دو سال کی کم ترین سطح کو چھو گیا۔ 

 جمعہ کو اسٹاک مارکیٹ 42,000 پوائنٹس سے اوپر بند ہوئی تھی کیونکہ سرمایہ کار آئندہ بجٹ کے اعلان کے بارے میں پر امید ہیں۔ 

اسٹاک مارکیٹ اور شرح مبادلہ میں اتار چڑھاؤ

اسٹاک مارکیٹ اور شرح مبادلہ میں اتار چڑھاؤ ہفتے کے روز وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کے اس بیان کے بعد آیا جس میں انہوں نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے بیل آؤٹ پیکج کی بحالی میں تاخیر کے بارے میں بات کی تھی۔

یہ بھی پڑھیں | بھارتی ظلم: مقبوضہ جموں کشمیر میں تین نوجوان شہید

یہ بھی پڑھیں | آئی ایم ایف کا اعتراض: حکومت کا سیلری ٹیکس ریلیف پر نظر ثانی کا فیصلہ

 مفتاح اسماعیل نے کہا تھا کہ جمعے کو قومی اسمبلی میں پیش کیے جانے والے وفاقی بجٹ 2022-23 پر عالمی قرض دینے والے ادارے کو کئی اعتراضات ہوسکتے ہیں۔ اس سے قبل وزیر نے کہا تھا کہ بجٹ کے بعد آئی ایم ایف پروگرام دوبارہ شروع ہونے کی امید ہے۔ 

چین کی طرف سے 2 بلین ڈالر مالیت کے پختہ ہونے والے قرض کو رول اوور کرنے کی یقین دہانی کے باوجود روپے کی قدر میں نئی ​​غیر یقینی صورتحال دیکھی جا رہی ہے۔

 پاکستان نے رواں ماہ جون میں چین کو 2 ارب ڈالر کی ادائیگی کرنی تھی۔

 ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر 9.2 بلین ڈالر کے چھ ہفتوں کے درآمدی احاطہ کی انتہائی کم سطح پر آ گئے ہیں۔ روپے کو مستحکم کرنے اور بین الاقوامی ادائیگی کے بحران کے توازن کو بگڑنے سے بچنے کے لیے ذخائر میں اضافہ ضروری ہے۔

 اگست 2020 میں ایشیا کی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی اسٹاک مارکیٹ کا اعزاز حاصل کرنے کے باوجود گزشتہ ہفتے پاکستان اسٹاک ایکسچینج ایشیا کی تیسری بدترین کارکردگی والی مارکیٹ بن گئی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں