بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں آنے والی ایس ایم ایس کو بحال کیا ، موبائل انٹرنیٹ اب بھی کاٹا ہے.

بھارت نے منگل کے روز مقبوضہ کشمیر میں آنے والے متنی پیغامات کی اجازت دینے کو تیار کیا تھا ، حکام نے بتایا کہ نئی دہلی جب پہلی بار روکا گیا تھا
خطے کی خودمختاری کو ختم کرنے کیلئے منتقل ہوگئے۔

5 اگست کو ہونے والے مواصلات بلیک آؤٹ – جس میں لینڈ لائنز ، موبائل فونز اور انٹرنیٹ تک رسائی شامل تھی – نے مقامی لوگوں اور کاروباری اداروں کو بری طرح متاثر کیا ہے ، خاص طور پر کیونکہ ٹیکسٹ بینکاری کے عمل کا لازمی جزو ہیں۔

دہلی میں عہدیداروں نے کہا کہ بدستور متعدد ہمالیائی خطے کے لاکھوں افراد مالی پیغامات وصول کرسکیں گے ، بشمول مالیاتی اداروں کے ایک وقتی پاس ورڈ بھی۔
عہدیداروں نے بتایا کہ وہ ابھی بھی پیغامات بھیجنے سے قاصر ہوں گے۔

ایس ایم ایس کے ذریعہ بھیجے گئے پاس ورڈز جنوبی ایشیائی ملک میں بہت سے آن لائن خریداری اور مالی لین دین کے لئے وسیع پیمانے پر استعمال ہوتے ہیں۔

کمپنیوں اور صارفین نے کلیمپاؤنڈ کی شکایت کی تھی اس کا مطلب ہے کہ وہ اچانک روزانہ سادہ لین دین کرنے سے قاصر ہیں۔

مقبوضہ وادی میں مقیم کشمیریوں نے بتایا کہ انہیں فون خریدنے یا ان کے بل ادا کرنے میں مدد کے ل to بتدریج فون لائنوں کی بحالی کے بعد وادی کے باہر رشتہ داروں یا دوستوں کو – وادی کے باہر فون کرنے کا سہارا لینا پڑا۔
اکتوبر کے وسط میں موبائل فون لائنوں کے ساتھ ٹیکسٹ میسجنگ کی خدمات کو بحال کیا گیا تھا لیکن پھر حکام نے کچھ گھنٹے بعد ایک ٹرک ڈرائیور کی ہلاکت اور اس کی گاڑی کو آگ لگادی۔

صارفین اب بھی ایپ پر مبنی میسیجنگ پلیٹ فارم تک رسائی حاصل نہیں کرسکتے ہیں کیونکہ موبائل انٹرنیٹ سروسس مسدود ہیں۔

پاکسیدیلی سے متعلق مزید خبریں پڑھیں:  https://urdukhabar.com.pk/category/international/

ثاقب شیخ۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں