بٹ کوائن کی قیمت ساٹھ ہزار ڈالر کے قریب پہنچ گئی

 پاکستان پاکستان

بٹ کوائن آج چھ ماہ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا ہے۔

اپریل میں یہ ریکارڈ ہٹ کے قریب پہنچ گیا تھا کیونکہ تاجروں کو یقین ہو گیا کہ امریکی ریگولیٹرز اس کے مستقبل کے معاہدوں کی بنیاد پر ایکسچینج ٹریڈڈ فنڈ کے آغاز کی منظوری دیں گے۔ 

دنیا کی سب سے بڑی کرپٹو کرنسی تقریبا 4 فیصد بڑھ کر 59،664 ڈالر تک پہنچ گئی ہے جو اپریل کے وسط کے بعد سے سب سے زیادہ قیمت ہے۔ 

 اس سال اس کی قیمت دوگنی ہو گئی ہے اور یہ اپریل کے ریکارڈ 64،895 کے قریب ہے۔ 

زرائع نے بتایا کہ امریکی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن (ایس ای سی) پہلے امریکی بٹ کوائن فیوچر ای ٹی ایف کو اگلے ہفتے تجارت شروع کرنے کی اجازت دینے کے لیے تیار ہے۔

  ایشیا میں قائم کرپٹو کرنسی ایکسچینج اے اے ایکس میں تحقیق اور حکمت عملی کے سربراہ بین کیسیلین نے کہا ہے کہ بٹ کوائن کا  59،000 ڈالر سے اوپر کا اضافہ صوابدیدی نہیں ہے اور طویل مدتی سرمایہ کار اسے تھوڑی دیر کے لیے جمع کر رہے تھے۔

یہ بھی پڑھیں | مفتی طارق مسعود جب جہلم انجینئیر محمد علی مرزا سے مناظرے کے لئے پہنچے تو کیا ہوا؟

 ایس ای سی کے ٹویٹ میں کہا گیا ہے کہ بٹ کوائن فیوچر کنٹریکٹ والے فنڈ میں سرمایہ کاری کرنے سے پہلے اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ ممکنہ خطرات اور فوائد کا احتیاط سے جائزہ لیں۔

  کرپٹو کرنسی سرمایہ کار ملک کے پہلے بٹ کوائن ای ٹی ایف کی منظوری کی خبروں کا انتظار کر رہے ہیں اور حالیہ مہینوں میں بٹ کوائن کی کچھ ریلی اس اقدام کی توقع میں ہے اور یہ کس طرح اپنے مرکزی دھارے کو اپنانے اور تجارت کو تیز کر سکتی ہے۔ 

 کئی فنڈ مینیجرز نے امریکہ میں بٹ کوائن ای ٹی ایف  لانچ کرنے کے لیے درخواست دی ہے۔ 

 ای ٹی ایفس اس سال کینیڈا اور یورپ میں شروع کی گئی ہیں۔ 

 بلوم برگ کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پرو شیئرز اور انویسکو کی تجاویز فیوچر کنٹریکٹ پر مبنی ہیں اور میوچل فنڈ کے قوانین کے تحت دائر کی گئی تھیں جن کے بارے میں جینسلر نے کہا ہے کہ “اہم سرمایہ کاروں کو تحفظ فراہم کرتے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

cropped-urdu_khabar_logo.png

ہمارے نیوز لیٹر میں شامل ہوں۔

تازہ ترین مضامین، نوکریاں، مفت، تفریحی خبریں براہ راست اپنے ان باکس میں حاصل کریں۔

170000 سبسکرائبرز یہاں ہیں۔