بجلی کی قیمتوں پر سخت فیصلے ابھی کر لیں تو بہتر ہے، خرم دستگیر

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ مذاکرات کے درمیان بظاہر ایندھن اور بجلی کی چھوٹ کو تبدیل کرنے کا مرحلہ مشکل نظر آ رہا ہے۔ تاہم اتحادی حکومت کے توانائی کے وزراء نے جمعرات کو کہا کہ اب سخت فیصلے چھ ماہ بعد ہونے والے سخت انتخاب سے بہتر ہوں گے۔ 

بین الاقوامی قیمتوں (تیل، گیس اور کوئلے کی) میں کمی مختصر سی درمیانی مدت یعنی کم از کم چھ ماہ کے دوران متوقع نہیں ہے۔ لہٰذا ذمہ داری کا تقاضا ہے کہ اب مشکل فیصلے کرنا بہتر ہے، بلکہ چھ ماہ بعد اس سے بھی زیادہ مشکل فیصلے کرنا ہوں گے۔

 تفصیلات کے مطابق یہ گفتگو وفاقی وزیر برائے بجلی خرم دستگیر خان نے وزیر مملکت برائے پیٹرولیم ڈاکٹر مصدق ملک کے ساتھ مشترکہ نیوز کانفرنس میں کی۔

 ایک مشترکہ نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے، خرم دستگیر اور ڈاکٹر مصدق ملک نے توانائی کے شعبے کے چیلنجز بشمول لوڈشیڈنگ، بڑھتے ہوئے گردشی قرضے اور مہنگی توانائی کے لیے پچھلی پی ٹی آئی حکومت کو ذمہ دار ٹھہرایا کیونکہ پاور پلانٹس یا بجلی گھروں کے لیے کوئلے، ایل این جی اور فرنس آئل کے بروقت انتظامات کرنے میں ناکامی تھی۔ 

 انہوں نے کہا کہ گزشتہ ساڑھے تین سالوں میں غربت کی صورتحال اس قدر بڑھ گئی ہے کہ تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق چھ میں سے چار خاندان 18000 سے 25000 روپے کی ماہانہ آمدنی پر زندگی بسر کر رہے تھے اور قیادت نہیں چاہتی تھی کہ ان پر مزید بوجھ پڑے۔

یہ بھی پڑھیں | کراچی حملے کی ذمہ داری قبول کر لی گئی، ابتدائی رپورٹ تیار  

 انہوں نے کہا کہ ان معاملات کو کافی حد تک حتمی شکل دے دی گئی ہے تاکہ پی ٹی آئی کی جانب سے نصب کی جانے والی مائن فیلڈز کی لاگت کا ایک حصہ حکومت اپنے ذمے لے لے اور قیمتوں میں اضافے سے غریبوں کو کچلنے کی بجائے امیروں کی طرف لے جائے۔ 

انہوں نے کہا کہ یہ معاملات آئی ایم ایف کے ساتھ بھی طے کیے جا رہے ہیں کیونکہ عمران خان نے نہ صرف ایندھن اور بجلی کی قیمتوں میں بالترتیب 10 روپے اور 5 روپے فی یونٹ کمی کی بلکہ انہیں چار ماہ کے لیے منجمد بھی کر دیا جس کا مجموعی بجٹ 700-800 ارب روپے کے بغیر تھا۔

  انہوں نے یہ امید بھی ظاہر کی کہ بجلی کی کمی کو مکمل طور پر ختم کیا جاسکتا ہے کیونکہ وزیراعظم کی ہدایت پر یکم سے 12 مئی کی تعطیلات کے دوران اس کو یقینی بنایا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی کوئلے کی قیمتیں چند ماہ میں 100 ڈالر فی ٹن سے بڑھ کر 360 ڈالر تک پہنچ گئی ہیں لیکن پی ٹی آئی حکومت نے کوئلے کی درآمد کا بندوبست نہیں کیا۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ لوڈشیڈنگ روزانہ ایک گھنٹے سے بڑھا کر دو گھنٹے کر دی گئی ہے جو جمعرات کو 1,230 میگاواٹ کے حویلی بہادر شاہ پلانٹ کی بحالی کے لیے بند ہونے کی وجہ سے زیادہ ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں