ایف آئی نے شاہ محمود قریشی کو سائفر اور آڈیو  معاملے میں یکم نومبر کو طلب کر لیا

سائفر سے متعلق آڈیو لیکس کی انکوائری میں شاہ محمود قریشی طلب

ایک اہم پیشرفت میں، وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) نے جمعہ کے روز سابق وزیر خارجہ اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی کو سائفر سے متعلق آڈیو لیکس سے متعلق انکوائری میں طلب کر لیا ہے۔

 واضح رہے کہ سابق سیکرٹری خارجہ سہیل محمود بھی ایف آئی اے ہیڈ کوارٹرز میں تحقیقاتی ٹیم کے سامنے پیش ہوئے جہاں ان سے سائفر معاملے پر پوچھ گچھ کی گئی۔ 

 ذرائع کا کہنا ہے کہ شاہ محمود قریشی کو یکم نومبر کے لیے طلبی کا نوٹس جاری کیا گیا ہے۔ انہیں دوپہر 12 بجے ایف آئی اے ہیڈ کوارٹر طلب کیا گیا ہے جہاں ان سے سائفر سے متعلق آڈیو لیکس کی جاری انکوائری میں پوچھ گچھ کی جائے گی۔ 

 کابینہ نے قانونی کارروائی کی منظوری دے دی ہے۔

’سائفر‘ آڈیو لیکس کے حوالے سے قانونی کارروائی کی منظوری

اس سے قبل، وفاقی کابینہ نے پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان اور ان کی پارٹی کے رہنماؤں کے خلاف ’سائفر‘ آڈیو لیکس کے حوالے سے قانونی کارروائی کرنے کی باضابطہ منظوری جاری کی تھی۔ ۔

 وفاقی تحقیقاتی ایجنسی کو کابینہ کی طرف سے ‘سفارتی سائفر’ آڈیو لیکس کی تحقیقات کے لیے منظوری کی منظوری دی گئی، جس میں سابق حکومتی اعلیٰ افسران نے مبینہ طور پر اس بات پر تبادلہ خیال کیا کہ وہ سائفر کے معاملے پر “کھیل” کیسے کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں | اینٹی اسٹیبلشمنٹ ٹوئٹ کیس میں سینیٹر اعظم سواتی کی ضمانت منظور  

مورخہ 30 ستمبر کو ایک کابینہ کمیٹی تشکیل دی گئی تھی جس میں پی ٹی آئی کے چیئرمین اور ان کی پارٹی کے رہنماؤں کی آڈیو لیکس کے حوالے سے کارروائی پر غور کیا جائے گا، جس میں جنرل سیکریٹری اسد عمر، اس وقت کے پرسنل سیکریٹری اعظم خان اور نائب صدر شاہ محمود قریشی شامل ہیں۔ 

 کمیٹی نے گزشتہ روز ہونے والے اجلاس میں قانونی کارروائی کی سفارش کی اور تجاویز سمری کی صورت میں کابینہ کے سامنے منظوری کے لیے پیش کی گئیں۔ 

یہ قومی سلامتی کا معاملہ ہے

کابینہ کمیٹی نے ایک نوٹیفکیشن میں کہا کہ  یہ قومی سلامتی کا معاملہ ہے جس کے ملکی مفاد پر ممکنہ منفی اثرات مرتب ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ قانونی کارروائی “ضروری” تھی اور ایف آئی اے کو معاملے کی تحقیقات کے لیے سینئر حکام پر مشتمل کمیٹی تشکیل دینی چاہیے۔

 کمیٹی نے سمری میں سفارش کی کہ ایف آئی اے کی ٹیم مجرموں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کرے۔ 

 حال ہی میں منظر عام پر آنے والی آڈیو لیک کے بعد سابق حکمران جماعت تحریک انصاف پر تنقید ہو رہی میں جس میں مبینہ طور پر عمران خان، اسد عمر، اعظم خان اور شاہ محمود قریشی کے درمیان ہونے والی گفتگو لیک ہوئی ہے۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔