اپوزیشن کی اے پی سی، حکومت کے خلاف جمہوری تحریک چلانے کا فیصلہ

حزب اختلاف کی جماعتوں نے اتوار کو آل پارٹیز کانفرنس میں اعلان کیا ہے کہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے نام سے ایک نیا اتحاد تشکیل دیا جائے گا جس کے تحت تمام اپوزیشن پارٹیاں موجودہ حکومت کو ختم کرنے کے لئے متحد ہوجائیں گی۔

 اسلام آباد میں آل پارٹیز کانفرنس کے بعد اپوزیشن کی طرف سے “آل پارٹیز کانفرنس” کے نام سے بل دیا گیا جس میں اپوزیشن نے حکومت سے “ملک کو نجات دلانے” کے لئے اپنے منصوبے کو شیئر کیا۔ 

جے یو آئی (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے میڈیا بریفنگ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حزب اختلاف “منتخب وزیر اعظم عمران خان نیازی کے فوری استعفے” کا مطالبہ کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسا کرنے میں ناکامی کے نتیجے میں مشترکہ اپوزیشن ملک گیر احتجاج کا اعلان کرے گی جس میں وکلا ، تاجر ، مزدور ، کسان ، سول سوسائٹی اور عام عوام کی شرکت شامل ہوگی۔ 

اس احتجاج کے اکتوبر سے شروع ہونے والے پہلے مرحلے میں ، سندھ ، بلوچستان ، خیبر پختونخوا اور پنجاب میں ریلیاں نکالی جائیں گی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ دسمبر سے شروع ہونے والے دوسرے مرحلے میں ، ملک بھر میں زبردست مظاہرے ہوں گے۔ تیسرے مرحلے میں ، آئندہ سال جنوری میں ، اپوزیشن جماعتوں کا اسلام آباد کی جانب لانگ مارچ ہو گا جو حکومت کو بہا کر لے جائے گا۔

منتخب حکومت کو ختم کرنے کے لئے ، مشترکہ اپوزیشن تمام حربے استعمال کرے گی ، جس میں عدم اعتماد اور پارلیمنٹ سے استعفے کے آپشنز شامل ہیں۔

 دریں اثنا ، مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے کہا کہ حزب اختلاف کے پاس ان فیصلوں کے علاوہ کوئی آپشن نہیں ہے کیونکہ موجودہ حکومت “منتخب”کردہ ہے اور ملکی معاملات سنبھالنے کی اہل نہیں ہے۔ انہوں نے کہا   کہ اگر حکومت اپنی حکومت جاری رکھے گی تو ملک کا مستقبل خطرہ میں ہے۔

 پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ اپوزیشن مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین آصف زرداری کی رہنمائی اور حمایت میں اپنے “مشن” کی طرف جارہی ہے۔ 

ایک سوال کے جواب میں بلاول زرداری نے کہا کہ اگر آج کوئی پارٹی وعدوں سے دستبردار ہوتی ہے تو عوام کو اس کا جواب دینا پڑے گا۔ پیپلز پارٹی کے چیئرمین نے کہا کہ ابھی تک قائد تحریک کا فیصلہ نہیں ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ تحریک نہ صرف حکومت کے خلاف جدوجہد کرے گی بلکہ “جن لوگوں نے اسے اقتدار میں لایا ہے” ان کے خلاف بھی کام کرے گی۔

 جب ان سے جب اپوزیشن کے اتحاد کی حد تک آگے بڑھنے کے بارے میں پوچھا گیا تو بلاول نے کہا کہ ہر حال میں حزب اختلاف ایک ساتھ کھڑی ہوگی اور مولانا فضل الرحمان کو بھی ساتھ ہی رکھا جائے گا۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *