مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

انگلینڈ ٹیم کی قوانین کی خلاف ورزی، انگلینڈ کرکٹ بورڈ کی مینجمنٹ پر سوالات اٹھ گئے

دنیا بھر میں لاکھوں شائقین یہ سوچ کر حیران ہیں کہ انگلینڈ میں جیو محفوظ بلبلا کی خلاف ورزی کیسے ہوئی جس کے نتیجے میں انگلینڈ ٹیم کے سات ممبران کورونا وائرس کا شکار ہو گئے۔

 اسلام آباد میں مقیم ایک سابق ٹیسٹ کرکٹر نے کہا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ یہ بلبلے قانون کی سنگین خلاف ورزی ہے جس کے نتیجے میں اسکواڈ کے سات ارکان وائرس کا شکار ہو گئے ہیں۔

 انہوں نے مزید کہا کہ یہ انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ (ای سی بی) کے لئے ایک ٹیسٹ کیس تھا اور ان کی مینجمنٹ پہ کئی سوال اٹھ گئے ہیں۔

 انہوں نے مزید کہا کہ یہ معلوم کرنے کے لئے کہ یہ سب کیسے غلط ہوا ہے اس کی تحقیقات کرنی ہوگی۔ 

انہوں نے کہا کہ ہماری ٹیم کے ممبران تمام کوویڈ19 پروٹوکول پر عمل پیرا ہیں۔ یہاں تک کہ میچ ریفری کا سری لنکا اور انگلینڈ سیریز کے دوران بھی مثبت کرونا ٹیسٹ آیا۔ 

 انہوں نے حیرت کا اظہار کیا کہ گذشتہ سال سے کوویڈ19 پھیلنے کے بعد کرکٹ دوبارہ شروع ہونے کے بعد بائیو محفوظ بلبلا کی سب سے بڑی خلاف ورزی پر آئی سی سی کیوں خاموش ہے۔ انگلینڈ میں کنڈیشنز کا وسیع تجربہ رکھنے والے ٹیسٹ کرکٹر نے کہا کہ ای سی بی کو اس کی بنیادی تک پہنچنا ہوگا۔ 

یہ بھی پڑھیں | اسٹیٹ بینک 25،000 تک ڈیجیٹل ٹرانسفر “مفت” بنا دیا

یہ بہت سنجیدہ بات ہے اور ای سی بی کو کرکٹ کے مستقبل کے بہترین مفاد میں اس کی تفتیش کرنی ہوگی۔

 یاد رہے کہ انگلینڈ کی ٹیم نے منگل کے روز ایک نیا پلیئنگ الیون منتخب کیا جب یہ انکشاف ہوا کہ اسکواڈ کے سات ممبروں کو کوویڈ19 ہو گیا ہے

 تین کھلاڑیوں اور بیک روم کے عملے کے چار ممبر وائرس کا شکار ہوئے۔ اس ٹیم کی قیادت اب بین اسٹوکس کریں گے کیونکہ بیشتر کھلاڑی الگ تھلگ رہیں گے۔

 انگلینڈ کا پہلا ون ڈے میچ جمعرات 8 جولائی کو کارڈف میں ہوگا۔  آل راؤنڈر زخمی انگلی کی وجہ سے پچھلے کئی ہفتوں سے ٹیم سے باہر تھے۔ 

پی سی بی بورڈ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ انگلینڈ کیمپ میں کوویڈ 19 کے پھیلنے کی خبر کے بعد سے ہی پاکستان کرکٹ بورڈ اپنے کھلاڑیوں کی صحت اور حفاظت سے متعلق خدشات کے سلسلے میں انگلینڈ اور ویلز کرکٹ بورڈ سے قریبی رابطے میں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔