انڈیا نے ایشیاء میں منکی پاکس سے پہلی موت کی تصدیق کر دی

بھارت نے پیر کے روز اپنی پہلی منکی پاکس کی موت کی تصدیق کر دی ہے جو کہ جنوبی ریاست کیرالہ میں ایک نوجوان کی ہوئی ہے۔

اسپین نے دو منکی پاکس کیسز کی وجہ سے موت کی اطلاع دی

 پچھلے ہفتے، اسپین نے دو منکی پاکس کیسز کی وجہ سے موت کی اطلاع دی تھی اور برازیل میں بھی پہلی موت ہوئی تھی۔ ہندوستان میں ہونے والی موت بھی ایشیاء میں پہلی ہے۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے 23 جولائی کو اس وباء کو عالمی ہیلتھ ایمرجنسی قرار دیا۔ 

 کیرالہ کے وزیر محصول نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ 22 سالہ ہندوستانی شخص کی ہفتے کے روز موت ہوگئی۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت نے 21 افراد کو الگ تھلگ کردیا تھا جو اس کے ساتھ رابطے میں آئے تھے۔ 

 وزیر کے راجن نے کہا کہ وہ شخص 21 جولائی کو کیرالہ پہنچا لیکن 26 جولائی کو ہی ایک ہسپتال کا دورہ کیا جب اس نے تھکاوٹ اور بخار ظاہر کیا۔ وزیر کے راجن نے کہا کہ گھبرانے کی کوئی وجہ نہیں ہے کیونکہ ابتدائی رابطوں میں سے کوئی بھی علامات ظاہر نہیں کر رہا تھا۔

یہ بھی پڑھیں | بھارت: قرضوں میں دبے تلے شخص کی مکان بیچنے سے کچھ گھنٹے پہلے لاٹری نکل آئی

یہ بھی پڑھیں | انڈونیشیاء میں سات سالہ مہنگائی کا ریکارڈ ٹوٹ گیا 

 کیرالہ کی وزیر صحت وینا جارج نے اتوار کے روز نامہ نگاروں کو بتایا کہ اس شخص کے اہل خانہ نے گزشتہ روز حکام کو بتایا کہ اس نے ہندوستان واپس آنے سے قبل متحدہ عرب امارات میں مثبت تجربہ کیا تھا۔ 

 ہندوستان کی وفاقی وزارت صحت نے اس موت پر کوئی تبصرہ نہیں کیا سوائے اس کے کہ حکومت نے ملک میں منکی پاکس کیسوں کی نگرانی کے لیے سینئر حکام کی ایک ٹاسک فورس بنائی ہے۔

 ڈبلیو ایچ او کے مطابق پچھلے مہینے کے آخر میں 78 ممالک میں مونکی پوکس کے 18,000 سے زیادہ کیسز رپورٹ ہوئے تھے، جن میں اکثریت یورپ میں تھی۔ 

 اس کا کہنا ہے کہ منکی پوکس وائرس چیچک کے مقابلے میں کم شدید علامات والی بیماری کا سبب بنتا ہے اور یہ بنیادی طور پر وسطی اور مغربی افریقہ میں پایا جاتا ہے۔ یہ بیماری جانوروں سے انسانوں میں منتقل ہوتی ہے۔ انسان سے انسان میں منتقلی جسمانی رطوبتوں، جلد پر یا اندرونی بلغم کی سطحوں، جیسے منہ یا گلے، سانس کی بوندوں اور آلودہ اشیاء سے رابطے کے ذریعے ہوتی ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں