امریکی محکمہ خارجہ نے “دھمکی آمیز خط” کو بےبنیاد قرار دے دیا

امریکی محکمہ خارجہ نے “دھمکی آمیز خط” کے بارے میں کہا ہے کہ کسی امریکی حکومتی ادارے یا اہلکار نے پاکستان کی سیاسی صورتحال پر تبصرہ کرنے والا خط نہیں بھیجا ہے جس میں پاکستانی وزیراعظم عمران خان کو آئندہ عدم اعتماد کے ووٹ میں اقتدار سے باہر کرنے کی خواہش کا اظہار کیا گیا ہو۔

 بدھ کے روز، متحدہ قومی موومنٹ-پاکستان، جو کہ پارلیمنٹ میں عمران خان کی سب سے بڑی اتحادی تھی، نے حزب اختلاف کی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے ساتھ ایک معاہدہ کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ  وزیر اعظم کے خلاف عدم اعتماد کا ووٹ دے گی۔ 

یاد رہے کہ عمران خان کی پارٹی کے پاس خود قومی اسمبلی میں اکثریت نہیں ہے اور اس نے اتحادیوں کی حمایت حاصل کر کے حکومت قائم کی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | معلوماتی: ایم کیو ایم نے کس کس حکومت کے ساتھ کب کب ڈیل کی؟  

عمران خان کو ان کی اپنی پاکستان تحریک انصاف پارٹی کے ایک درجن اسمبلی ممبران کی بغاوت کا بھی سامنا ہے جنہوں نے عوامی طور پر ان کے خلاف ووٹ دینے کا اعلان کیا ہے۔ 

اتوار کو جلسے سے خطاب میں، عمران خان نے الزام لگایا کہ ان کے خلاف عدم اعتماد کا ووٹ اور انہیں بے دخل کرنے کی کوششیں ایک غیر ملکی سازش کا حصہ ہیں اور الزام لگایا کہ ان کے پاس اپنے الزامات کو ثابت کرنے کے لیے ایک “دھمکی آمیز” خط موجود ہے۔ عمران خان نے یہ نہیں بتایا کہ یہ خط کس ملک یا شخصیت نے لکھا ہے۔  تاہم، یہ بات سامنے آئی ہے کہ یہ خط ایک پاکستانی سفارت کار کی طرف سے لکھا گیا ایک سفارتی کیبل تھا جس میں عمران خان کی قیادت میں امریکہ اور پاکستان کے کشیدہ تعلقات کے بارے میں امریکی جذبات کو بیان کیا گیا تھا اور یہ امید تھی کہ اگر حکومت کی تبدیلی ہوتی ہے تو تعلقات میں بہتری آسکتی ہے۔

 لیکن پاکستان کے نجی نیوز ادارے کے مبینہ خط اور پی ٹی آئی حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد میں امریکہ کی شمولیت کے بارے میں سوالات کا جواب دیتے ہوئے، محکمہ خارجہ کے ترجمان نے کہا: “ان الزامات میں کوئی صداقت نہیں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔