اقوام متحدہ کی مقبوضہ کشمیر میں بےجا گرفتاریوں کی مذمت

اقوام متحدہ کی مقبوضہ کشمیر میں بےجا گرفتاریوں کی مذمت

 امریکہ  امریکہ

اقوام متحدہ اور انسانی حقوق

کے گروپوں نے بھارت کے مقبوضہ کشمیر میں دہشت گردی کی مالی معاونت کے الزام میں ایک سرکردہ کارکن کی بےجا گرفتاری پر تنقید کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق خرم پرویز کو پیر کو دیر گئے بھارت کی وفاقی قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) نے گرفتار کیا۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ ان کی رہائش گاہ اور دفتر کی تلاشی لی گئی اور ایک موبائل فون، لیپ ٹاپ اور کتابیں ضبط کی گئیں۔ 

این آئی اے کے ترجمان نے منگل کو پرویز کی گرفتاری کی تصدیق کی۔ 

یہ بھی پڑھیں | مریم نواز کے وزیر اعظم کے لئے نامناسب الفاظ کے بعد سوشل میڈیا صارفین برہم   

انہوں نے بتایا کہ اسے غیر قانونی سرگرمیاں (روک تھام) ایکٹ کے تحت حراست میں لیا گیا ہے جو بغیر کسی مقدمے کے چھ ماہ تک حراست میں رکھنے کی اجازت دیتا ہے۔ 

 ان کے وکیل پرویز امروز سے فوری طور پر تبصرے کے لیے رابطہ نہیں ہو سکا۔ 

  اقوام متحدہ کی خصوصی نمائندہ برائے انسانی حقوق کے محافظ میری لالر نے پرویز کی گرفتاری کو “پریشان کن” قرار دیا۔ ۔

 اس نے ٹویٹ کیا کہ وہ دہشت گرد نہیں ہے، وہ انسانی حقوق کا محافظ ہے۔

خرم پرویز، کشمیر کے معروف کارکنوں میں سے ایک ہیں، جموں کشمیر کولیشن آف سول سوسائٹی کے سربراہ ہیں، جو کہ خطے میں کام کرنے والی حقوق کی تنظیموں کا ایک گروپ ہے۔ 

 انہیں 2016 میں جنیوا میں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے فورم میں شرکت کے لیے پرواز میں سوار ہونے سے روکنے کے بعد اسی طرح کے الزامات کے تحت گرفتار کر کے حراست میں لیا گیا تھا اور آخرکار اسے بغیر کسی جرم کے مجرم ٹھہرائے چھوڑ دیا گیا۔ 

یاد رہے کہ بھارت طویل عرصے سے مقبوضہ علاقے میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں میں ملوث ہے۔

Share on facebook
Share on twitter
Share on linkedin
cropped-urdu_khabar_logo.png

ہمارے نیوز لیٹر میں شامل ہوں۔

تازہ ترین مضامین، نوکریاں، مفت، تفریحی خبریں براہ راست اپنے ان باکس میں حاصل کریں۔

170000 سبسکرائبرز یہاں ہیں۔