افغان حکام نے سیکیورٹی کی خلاف ورزی کے شبہ میں ایک پرواز کو ٹیک آف سے روک دیا

  افغانستان میں بدھ کے روز ایک قطری پرواز کو کابل انٹرنیشنل ایئرپورٹ سے اڑان کے وقت افغانستان حکام نے سیکیورٹی کی کچھ خلاف ورزیوں کی بنا پر ٹیک آف کرنے سے روک دیا ہے۔

 افغانستان کے وزیر خارجہ نے مبینہ طور پر 02-02-2022 کو قطر کے طیارے کی پرواز نمبر کیو683 کو 300 مسافروں کے ساتھ سیکیورٹی پروٹوکول کی عدم تکمیل کرنے پر روک دیا ہے۔ 

اگرچہ ابھی تک کوئی سرکاری بیان سامنے نہیں آیا لیکن افغان صحافی کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ بورڈنگ اس لیے روک دی گئی کیونکہ بورڈنگ کراؤڈ میں دہشت گردوں کے شامل ہونے کے خدشات تھے۔ 

قطر کے بارے میں سخت شکوک و شبہات پائے جاتے تھے کہ وہ کابل ائیرپورٹ کو دہشت گرد گروپ کے ارکان کے حوالے کرنے کے لیے اڈے کے طور پر تبدیل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ قطری حکام نے محسوس کیا کہ افغانستان پر محفوظ راستے سے درمیانی زمین پر قابو پانا آسان ہو سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | مغرب افغانستان کے لئے امداد کو بنیادی انسانی حقوق سے جوڑتا ہے

 کچھ مقامی نمائندوں کا خیال تھا کہ شفٹ کے بارے میں پہلے سے موجود معلومات کی وجہ سے قطری پرواز کو روکا گیا۔

 تاہم طالبان نے ابھی تک پرواز روکنے کی کوئی وجہ نہیں بتائی ہے۔ تاہم ماہرین نے فوری طور پر یہ نوٹ کیا کہ یہ قطر کی طرف سے ملک کے مرکزی ائیرپورٹ پر کنٹرول حاصل کرنے کی کوشش ہو سکتی ہے۔ یہ بات ڈھکی چھپی نہیں کہ افغانستان ایران کے ساتھ اپنے تعلقات بہتر کر رہا ہے اور قطر کا رخ اس کی طرف ہو سکتا ہے۔

 یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ قطر نے ایک ملک سے دوسرے ملک میں دہشت گردی کو منتقل کرنے کا سوچا ہو۔ افغانستان پر طالبان کے قبضے سے پہلے بھی قطر نے عراق کے ساتھ ایسا ہی کرنے کی کوشش کی تھی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔