افغانستان کے لئے امریکی سفیر طالبان وفد سے پاکستان میں ملاقات کرے گا

 پاکستان  پاکستان

ایک پاکستانی اہلکار اور امریکی محکمہ خارجہ نے بتایا کہ افغانستان کے لیے امریکہ کے نئے خصوصی سفیر رواں ہفتے طالبان کے وزیر خارجہ اور چین اور روس کے سینئر سفارت کاروں سے ملاقات کے لیے پاکستان کا دورہ کریں گے۔ 

 زلمے خلیل زاد سے عہدہ سنبھالنے کے بعد سے تھامس ویسٹ کا خطے کا یہ پہلا دورہ ہو گا۔ یہ وہی ہیں جنہوں نے ان مذاکرات کی قیادت کی تھی جس کے نتیجے میں افغانستان سے امریکی انخلا ہوا تھا۔ 

پاکستانی حکومت کے ایک سینئر اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ یہ ملاقات جمعرات کو اسلام آباد میں ہونے والی ہے جس میں افغان طالبان کے نئے وزیر خارجہ امیر خان متقی بھی شامل ہوں گے۔ 

 محکمہ خارجہ نے ہفتے کے شروع میں کہا تھا کہ مغرب روس اور ہندوستان کا دورہ کرنے کا بھی ارادہ رکھتا ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | مینار پاکستان واقعہ: کیا واقعی عائشہ اکرم اور ریمبو بھاری رقم بٹور چکے ہیں؟   

 محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے اس ہفتے ایک بریفنگ میں بتایا کہ ہمارے شراکت داروں کے ساتھ مل کر، وہ ان توقعات کو واضح کرنا جاری رکھیں گے جو ہمیں طالبان اور مستقبل کی کسی بھی افغان حکومت سے ہیں۔

سینئر پاکستانی عہدیدار نے کہا ہے کہ اس ملاقات کا مقصد بنیادی طور پر انسانی بحران سے بچنے کے طریقے تلاش کرنا اور افغانستان میں ایک جامع حکومت کے قیام کے امکانات پر غور کرنا ہے۔

 اقوام متحدہ نے بارہا خبردار کیا ہے کہ افغانستان دنیا کے بدترین انسانی بحران کے دہانے پر ہے، آدھے سے زیادہ ملک کو “شدید” خوراک کی کمی کا سامنا ہے اور سردیوں نے لاکھوں افراد کو نقل مکانی اور فاقہ کشی کے درمیان انتخاب کرنے پر مجبور کیا ہے۔ 

 ان کے مطابق اسلام پسند طالبان نے واضح طور پر امداد کی بحالی کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی تعلقات کو معمول پر لانے اور پابندیوں میں نرمی دیکھنے کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔ 

 انہوں نے ان مسائل پر اتحادیوں سے اتحاد کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ واشنگٹن ان میں سے کوئی بھی چیز اپنے طور پر نہیں دے سکتا ہے۔

 مغرب نے کہا ہے کہ چین کا افغانستان میں “مثبت کردار” رہا ہے۔ 

  طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے بدھ کو ایک پریس کانفرنس میں کہا ہے کہ گروپ مختلف علاقائی اجلاسوں کا خیر مقدم کرتا ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ ہمیں کوئی فکر نہیں، ملاقاتیں افغانستان کے فائدے کے لیے ہوں گی کیونکہ پورا خطہ سمجھتا ہے کہ افغانستان کی سلامتی سب کے فائدے میں ہے۔ 

 مغرب نے خطے میں سلامتی سے متعلق کہا ہے کہ امریکہ کو افغانستان میں داعش کے حملوں میں حالیہ اضافے پر تشویش ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ طالبان ان کے خلاف کامیاب ہوں۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ افغانستان میں القاعدہ کی موجودگی طالبان کے ساتھ ہماری بات چیت میں ہمارے لیے جاری تشویش کا مسئلہ ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔