اسلام آباد ہائی کورٹ کا عمران خان کو نوٹس، 31 اگست کو طلب کر لیا

 اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کو شوکاز نوٹس جاری کرتے ہوئے 31 اگست کو طلب کر لیا۔ 

پی ٹی آئی چیئرمین کے خلاف توہین عدالت کیس

 اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی، جسٹس بابر ستار اور جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب پر مشتمل تین رکنی بینچ نے 20 اگست کو وفاقی دارالحکومت میں جلسے سے خطاب کے دوران ایڈیشنل سیشن جج زیبا چوہدری کو مبینہ طور پر دھمکیاں دینے پر پی ٹی آئی چیئرمین کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت کی۔

 پی ٹی آئی کے چیئرمین نے گزشتہ ہفتے دارالحکومت میں اپنے چیف آف سٹاف شہباز گل کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے ایک ریلی نکالی تھی اور خبردار کیا تھا کہ وہ آئی جی اسلام آباد پولیس اور ڈی آئی جی کو “بخش نہیں دیں گے اور شہباز گِل کو مبینہ غیر انسانی تشدد کا نشانہ بنانے پر ان کے خلاف مقدمات درج کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔ 

 ایڈیشنل سیشن جج کے پاس جاتے ہوئے، جنہوں نے پولیس کی درخواست پر گل کا ریمانڈ منظور کیا تھا، پی ٹی آئی کی چیئرپرسن نے کہا تھا کہ وہ اپنے خلاف کارروائی کرنے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے اپنے آپ کو نتائج کے لیے تیار رہیں۔ 

 آج کی سماعت

 آج کی سماعت کے آغاز پر ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد جہانگیر خان جدون نے عدالت کو آگاہ کیا کہ انہوں نے متعلقہ شواہد کو ریکارڈ پر لانے کے لیے متفرق درخواست دائر کی ہے۔ 

جسٹس محسن اختر کیانی نے استفسار کیا کہ قابل اعتراض ریمارکس کب دیئے گئے؟ 

 ایڈووکیٹ جنرل نے عدالت کو بتایا کہ عمران خان نے 20 اگست کو جلسے سے خطاب کرتے ہوئے خاتون جج کے بارے میں قابل اعتراض ریمارکس دیے۔

 انہوں نے کہا کہ خواتین جج پی ٹی آئی رہنما شہباز گل کے خلاف بغاوت کے مقدمے کی سماعت کر رہی تھیں۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان عدلیہ اور الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کو ناراض کرنے کے لیے مسلسل یہ زبان استعمال کر رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | ریحام خان کا مسلم لیگ ن کو  مشورہ

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد ہائی کورٹ نے عمران خان کی تین دن کی حفاظتی  ضمانت منظور کر لی

 انہوں نے کہا کہ عمران خان انصاف کی راہ میں رکاوٹ بن رہے ہیں۔ 

 عمران خان کے متنازعہ بیانات کا حوالہ دیتے ہوئے جسٹس کیانی نے ریمارکس دیے کہ ‘حتیٰ کہ عدالتیں بھی تحقیقات میں مداخلت نہیں کرتیں’۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ ایک خاتون جج کو دھمکی دی گئی ہے۔ اس ماحول میں کام نہیں ہو سکتا۔

 جج نے کہا کہ سابق وزیراعظم سے ایسے ریمارکس کی توقع نہیں کی جا سکتی۔ 

جسٹس کیانی نے سوال کیا کہ کیا آپ چاہتے ہیں کہ ایک عام آدمی اپنا انصاف خود شروع کرے؟

 سماعت کے دوران جہانگیر خان جدون نے عدالت کو آگاہ کیا کہ وہ خاتون جج کو اضافی سیکیورٹی فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں۔ 

انہوں نے تجویز پیش کی کہ یہ شوکاز نوٹس کا سیدھا معاملہ ہے۔

بعد ازاں، اسلام آباد ہائی کورٹ عدالت نے عمران خان کو شوکاز نوٹس جاری کیا اور ان کی 20 اگست کی تقریر کا مکمل ریکارڈ طلب کیا۔ جسٹس کیانی نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ وہ ذاتی طور پر عمران خان نیازی کو نوٹس کی تعمیل کریں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔