اسلام آباد ہائی کورٹ نے پی ڈی ایم لیڈرز کے خلاف درخواست خارج کر دی

 اسلام آباد ہائی کورٹ نے جمعے کو پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے رہنماؤں مریم نواز، رانا ثناء اللہ اور مولانا فضل الرحمان کے خلاف توہین عدالت کی درخواست خارج کردی ہے۔

عدالت نے آج اس درخواست پر سماعت کی اور اسے ناقابل سماعت قرار دے کر مسترد کر دیا۔

 اسلام آباد ہائی کورٹ نے اس اعتراض کو برقرار رکھا کہ رجسٹرار کا دفتر متعلقہ فورم نہیں ہے اور درخواست گزار کے وکیل سے پوچھا کہ درخواست کس بارے میں ہے۔ 

 وکیل نے جواب دیا کہ سوشل میڈیا پر ان رہنماؤں کی جانب سے مختلف عدلیہ مخالف بیانات دیے گئے۔ 

 جسٹس محسن اختر کیانی نے استفسار کیا کہ کیا اس ہائی کورٹ سے متعلق کوئی بیان ہے؟ اس کے بعد، انہوں نے درخواست گزار کے وکیل کو ہدایت کی کہ وہ کیس کو سپریم کورٹ اور لاہور ہائی کورٹ لے جائیں کیونکہ وکیل نے دعویٰ کیا کہ ان کا مبینہ بدنیتی پر مبنی بیانات میں ذکر ہے۔ 

 اگر درخواست گزار کا تعلق لاہور سے ہے تو وہ وہاں مقدمہ درج کیوں نہیں کر رہا؟ جسٹس کیانی نے ریمارکس دیئے کہ لاہور میں بھی عدالتیں ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | “صرف اسحاق ڈار ڈیلیور کر سکتا ہے” نواز شریف کا یقین

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد عدالت شہباز گل کو جیل واپس بھیج دیا 

 بعد ازاں عدالت نے توہین عدالت کی درخواست ناقابل سماعت قرار دے کر خارج کر دی۔ 

 پی ڈی ایم لیڈروں کے خلاف ‘بغاوت’ بیانات کا مقدمہ درج 

خیبرپختونخواہ (کے پی) میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی زیرقیادت حکومت نے منگل کو پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے رہنماؤں کو ریاستی اداروں کے خلاف ان کے “نفرت انگیز اور بغاوت پر مبنی بیانات” پر مقدمہ درج کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ 

فرسٹ انفارمیشن رپورٹ (ایف آئی آر) طلب کرنے والی ایک درخواست، جس کی ایک کاپی ایکسپریس ٹریبیون کے پاس دستیاب ہے، کوڈ آف کریمنل پروسیجر (سی آر پی سی) اور سیکشنز کی دفعہ 196 (ریاست کے خلاف جرائم کے لیے استغاثہ) کے تحت شرقی پولیس اسٹیشن میں دائر کی گئی تھی۔ 

درخواست میں مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف، شہباز شریف، مریم نواز، خواجہ سعد رفیق، رانا ثناء اللہ، عطا تارڑ، ایاز صادق، پرویز رشید اور جے یو آئی (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کو نامزد کیا گیا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔