اسلام آباد ہائی کورٹ نے غداری کیس میں شہباز گل کی درخواست ضمانت منظور کر لی

شہباز گل کی درخواست ضمانت منظور

پی ٹی آئی رہنما شہباز گل نے اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) میں فوج کی صفوں میں انتشار پیدا کرنے کی کوشش کے الزام میں اپنے خلاف درج بغاوت کے مقدمے میں ضمانت کی درخواست دائر کی ہے۔ 

 وفاقی دارالحکومت کی ایک مقامی عدالت نے اس ہفتے کے شروع میں ان کی ضمانت کی درخواست مسترد کر دی تھی اور مشاہدہ کیا تھا کہ ایک ذمہ دار شخص ہونے کے باوجود شہباز گل نے ایک سنسنی خیز بیان دیا جو پاک فوج کی ہم آہنگی اور نظم و ضبط کو بگاڑنے کے لیے کافی ہے۔ 

 آٹھ صفحات پر مشتمل فیصلے میں ایڈیشنل سیشن جج ظفر اقبال نے کہا کہ گل ایک مقبول قومی سطح کی جماعت پی ٹی آئی کے رہنما تھے اور انہوں نے یہ بیان انڈور میٹنگ میں نہیں دیا تھا۔ 

شہباز گل کا بیان سنسنی خیز تھا

حکم نامے میں کہا گیا کہ ’ان کا بیان سنسنی خیز تھا، جو پاکستان کے سب سے قابل احترام ادارے یعنی پاک فوج میں ہم آہنگی اور نظم و ضبط کو خراب کرنے کے لیے کافی تھا۔

یہ بھی پڑھیں | کچھ دنوں تک پنجاب میں اپنی حکومت بنائیں گے، ن لیگی رہنماؤں کا دعوی

یہ بھی پڑھیں | آرمی چیف کی ایکسٹینشن متعلق کوئی بات نہیں کی، عمران خان

آج جمع کرائی گئی اپنی درخواست ضمانت میں پی ٹی آئی رہنما نے سٹی مجسٹریٹ غلام مرتضیٰ اور ایس ایچ او تھانہ کوہسار اور دیگر کو فریق بناتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ 17 اگست کو پاکستان میڈیکل انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز کے میڈیکل بورڈ نے اپنی رپورٹ میں یہ نتیجہ اخذ کیا کہ اس کے جسم پر تشدد کے نشانات پائے گئے۔ 

 عدالت نے اپیل کی سماعت 5 ستمبر کو مقرر کی ہے۔ 

شہباز گل نے متنازعہ ریمارکس دئیے تھے

 پی ٹی آئی رہنما کو 9 اگست کو اسلام آباد کے بنی گالہ چوک سے ایک نجی ٹی وی چینل پر متنازعہ ریمارکس پر ان کے خلاف مقدمہ درج ہونے کے بعد گرفتار کیا گیا تھا۔ 

 گرفتاری کے بعد شہباز گل کو عدالت میں پیش کیا گیا جس نے دو روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کر لیا۔ تاہم پی ٹی آئی رہنماؤں نے دعویٰ کیا تھا کہ ان پر پولیس حراست کے دوران تشدد کیا گیا تاہم حکومت نے اس کی تردید کی ہے۔ 

شہباز گل کی گرفتاری کے خلاف نکالی گئی ایک احتجاجی ریلی میں عمران خان نے پولیس کے اعلیٰ حکام اور جج کو دھمکیاں دیں جس کے بعد پی ٹی آئی چیئرمین کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج کیا گیا۔ 

شہباز گل اس وقت جوڈیشل ریمانڈ پر جیل میں ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔