اسرائیل غزہ میں جنگ بندی پر راضی ہو گیا

 غزہ میں اسرائیل اور اسلامی جہاد عسکریت پسند گروپ کے درمیان جنگ بندی ہو گئی ہے۔

دونوں فریقوں کی طرف سے اتوار کی شام کو اعلان کردہ جنگ بندی

 دونوں فریقوں کی طرف سے اتوار کی شام کو اعلان کردہ جنگ بندی، کشیدگی شروع ہونے کے تقریباً 50 گھنٹے بعد سامنے آئی، جب اسرائیل نے غزہ میں اسلامی جہاد عسکریت پسند گروپ کے اہداف پر قبل از وقت حملے شروع کیے تھے۔ 

 فلسطینی حکام کی معلومات کے مطابق، اسرائیلی تشدد کے نتیجے میں 15 بچے اور کچھ عسکریت پسندوں سمیت کم از کم 44 فلسطینی ہلاک ہوئے۔ 

 یہ نقصان تقریباً 15 مہینوں میں سب سے زیادہ تھا جب مئی 2021 میں اسرائیلی فوج اور حماس کے درمیان 11 روزہ جنگ لڑی گئی۔

 اس بار ایک اہم فرق حماس کا لڑائی سے باہر رہنے کا فیصلہ تھا۔ اس کے بیانات میں اسرائیل کو اس کشیدگی کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا لیکن جوابی کارروائی میں دھمکی آمیز حملوں سے مسلسل باز رہا گیا۔

 اسرائیلی وزیر اعظم کے دفتر نے مصر کی ثالثی کی کوششوں پر شکریہ ادا کیا لیکن خبردار کیا کہ اگر جنگ بندی کی خلاف ورزی کی گئی تو اسرائیل کی ریاست سخت ردعمل کا حق رکھتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | کعبہ معظمہ میں حجر اسود اور حطیم کعبہ سے رکاوٹیں ہٹا دی گئیں

یہ بھی پڑھیں | انڈیا نے ایشیاء میں منکی پاکس سے پہلی موت کی تصدیق کر دی

 معاہدے کی شرائط کو فوری طور پر عام نہیں کیا گیا۔ تاہم، مصر کی سرکاری خبر رساں ایجنسی نے اطلاع دی ہے کہ جنگ بندی کے لیے دباؤ میں، قاہرہ چھ روز قبل اسرائیل کے ہاتھوں گرفتار کیے گئے اسلامی جہاد کے عسکریت پسند کی رہائی کے لیے کام کر رہا تھا اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ اسرائیلی جیل میں بھوک ہڑتال کرنے والے فلسطینی قیدی کو منتقل کیا جائے گا۔ 

 محکمہ خارجہ کی طرف سے پیر کو جاری ہونے والے ایک بیان میں امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے جنگ بندی کا خیر مقدم کیا ہے۔

 بیان میں کہا گیا ہے کہ معاہدہ اسرائیلی اور فلسطینی شہریوں کو خوش آئند مہلت دے گا اور غزہ میں اہم ایندھن اور دیگر سامان کی ترسیل کی اجازت دے گا۔

امریکہ اسرائیل کی سلامتی کے لیے اپنے فولادی عزم کے لیے وقف ہے اور امن کو فروغ دینے کے لیے آنے والے دنوں میں پوری طرح مصروف رہے گا۔ ہم غزہ کی پٹی میں فلسطینیوں کے معیار زندگی کو بہتر بنانے کے لیے شراکت داروں کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے آنے والے مہینوں میں جاری رکھیں گے۔

  یاد رہے کہ اتوار کو رات کے وقت اسرائیل کی طرف سے غزہ میں فضائی حملے کئے گئے جس کے بعد فلسطینی عسکریت پسندوں نے بھی یروشلم کی طرف راکٹ داغے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔