مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

آپ نے نواز شریف کو باہر بھیجا، اب اپ ہی واپسی کا انتظام کریں، اسلام آباد ہائیکورٹ کا گورنمنٹ کو جواب

اسلام آباد ہائیکورٹ نے حکومت سے کہا ہے کہ اس نے ایک مجرم نواز شریف کو عدالت کو آگاہ کیے بغیر بیرون ملک جانے کی اجازت دی ہے لہذا اب یہ حکومت کی ذمہ داری ہے کہ وہ ملک میں نواز شریف کی واپسی کو یقینی بنانے کے لئے اقدامات کرے۔ 

اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس عامر فاروق اور محسن اختر کیانی پر مشتمل بینچ سے خطاب کرتے ہوئے ایڈیشنل اٹارنی جنرل طارق محمود کھوکھر نے کہا کہ دفتر خارجہ نے 17 ستمبر کو برطانیہ میں پاکستان ہائی کمیشن کے توسط سے عدالت کے جاری ناقابل ضمانت گرفتاری وارنٹ گرفتاری کے بغیر عمل کیا۔ اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا  کہ یعقوب نامی شخص نے وارنٹ وصول کرنے سے انکار کردیا۔

اضافی اے جی پی نے عدالت کو بتایا کہ لندن میں پاکستانی ہائی کمیشن کے قونصلر اتاشی ، راؤ عبد الحان نے نواز شریف کی رہائش گاہ کا دورہ کیا اور وفاقی حکومت نے سزا یافتہ مجرم کو بیرون ملک جانے کی اجازت دی۔

 جسٹس فاروق نے کہا کہ حکومت ہی نے نواز کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں ڈال دیا اور بعد میں اسے وہاں سے بھی ہٹا دیا۔ جج نے کہا کہ حکومت کو کم از کم  عدالت کو آگاہ کرنا چاہئے تھا۔ ہمیں اپیل کے بارے میں فیصلہ کرنا ہے اور ہم مجرم کی پیشی کے منتظر ہیں۔ ایک بار جب تفتیش شروع ہوجائے تو مشتبہ افراد کے نام ای سی ایل میں شامل کردیئے جاتے ہیں۔ تاہم ، یہاں عدالت کو بھی مطلع نہیں کیا جاتا ہے اور مجرم کو بیرون ملک بھیج دیا جاتا ہے۔ 

ہم کسی سزا یافتہ شخص کی وطن واپسی کے لئے کوئی آرڈر پاس نہیں کریں گے۔ آپ نے اسے دوسرے ملک میں جانے کی اجازت دی تھی لہذا اب آپ پر منحصر ہے کہ اس کی واپسی کو یقینی بنانے کے لئے اقدامات کریں۔ پاکستان میں ایک سزا یافتہ شخص ملک چھوڑ گیا اور کسی نے عدالت سے پوچھنے یا بتانے کی زحمت گوارا نہیں کی۔ 

مزید برآں نواز شریف نے اسی ماہ اسلام آباد ہائیکورٹ کو مطلع کیا تھا کہ ان کا پاکستان واپس آنا اور عدالت کے سامنے پیش ہونا ممکن نہیں ہے۔ 

یاد رہے کہ عدالت نے انہیں 10 ستمبر تک عدالت کے سامنے پیش ہونے ہدایت کی تھی۔ 

 نواز شریف نے عدالت کو بتایا  کہ ان کو جو بیرون ملک بھیجنے کی اجازت دی گئی  اس میں یہ شرط شامل کی گئی تھی کہ حکومت واپس بلانے سے پہلے ان کی صحت کی جانچ کرے گی۔ وفاقی حکومت کے پاس میری صحت سے متعلق مستند معلومات نہیں ہیں ڈاکٹروں نے کوئی سرٹیفکیٹ جاری نہیں کیا ہے جس سے وہ وطن واپس آنے کے لئے ان کو “فٹ” قرار دے سکے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔