آرٹیکل 63 اے کی تشریح: صدارتی ریفرنس پر فیصلہ آج سنایا جائے گا

سپریم کورٹ آج شام 5:30 بجے آرٹیکل 63 اے کی تشریح کے لیے صدارتی ریفرنس پر اپنے فیصلے کا اعلان کرے گی، جو منحرف ارکان 0پارلیمنٹ کی نااہلی سے متعلق ہے۔ 

 چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں جسٹس اعجاز الاحسن، جسٹس مظہر عالم خان میاں خیل، جسٹس منیب اختر اور جسٹس جمال خان مندوخیل پر مشتمل پانچ رکنی بینچ نے آج کیس کی سماعت مکمل کی۔ 

 کیس کی پہلی سماعت 21 مارچ کو دو رکنی بنچ نے کی جس کے بعد چیف جسٹس بندیال نے معاملے کی سماعت کے لیے ایک بڑا بینچ تشکیل دیا جس نے اس وقت کے کم از کم ایک درجن ارکان کے بعد ملک میں خبروں اور عوامی گفتگو کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔

  اس وقت کے وزیر اعظم عمران خان کے خلاف مشترکہ اپوزیشن کی جانب سے جمع کرائی گئی تحریک عدم اعتماد کے معاملے پر اپنی پارٹی کی کھلم کھلا مخالفت کے بعد یہ ریفرنس دائر کیا گیا۔

ریفرنس میں اہم سوالات 

کیا “منحرف” ایم این ایز کو ووٹ ڈالنے دیا جائے گا؟

 کیا منحرف ارکان کے ووٹوں کو مساوی وزن دے کر شمار کیا جائے گا؟

 کیا منحرف ہونے والوں کو تاحیات نااہل قرار دیا جائے گا؟

 ایسے اقدامات جو انحراف، فلور کراسنگ اور ووٹ کی خرید و فروخت کو روکنے کے لیے کیے جا سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | اقوام متحدہ غذائیت اجلاس: پاکستان کی شرکت کا طریقہ کار غیر واضح 

آج کی سماعت کے دوران پاکستان مسلم لیگ (ن) کے وکیل مخدوم علی خان نے اپنا تفصیلی جواب عدالت میں جمع کرایا جب کہ نئے اٹارنی جنرل آف پاکستان اشتر اوصاف (اے جی پی) نے اپنے دلائل مکمل کر لیے۔ 

 دلائل مکمل ہونے کے بعد، توقع ہے کہ سپریم کورٹ آج شام 5:30 بجے اپنا فیصلہ سنائے گی۔ 

 روسٹرم لیتے ہوئے اوصاف نے کہا کہ صدارتی ریفرنس میں مفاد عامہ یا قانون سے متعلق سوالات اٹھائے جا سکتے ہیں۔ 

“کیا آرٹیکل 186 کے تحت پوچھے گئے سوال کا تعلق حکومت کی تشکیل سے نہیں ہے؟” چیف جسٹس نے پوچھا آرٹیکل 186 سپریم کورٹ کے مشاورتی دائرہ اختیار سے متعلق ہے۔ 

 اے جی پی نے جواب دیا کہ صدر نے ماضی میں اس طرح کے واقعات پر کبھی بھی ایسا ریفرنس نہیں بھیجا اور عدالت پر زور دیا کہ وہ ریفرنس کو ماضی کے تناظر میں بھی دیکھے۔ 

جسٹس احسن نے ریمارکس دیئے کہ صدر کو ریفرنس دائر کرنے پر اٹارنی جنرل سے قانونی مشورہ لینے کی ضرورت نہیں۔ آرٹیکل 186 کے مطابق جب کوئی قانونی سوال پیدا ہوتا ہے تو صدر ریفرنس بھیج سکتے ہیں۔ انہوں نے نشاندہی کرتے ہوئے پوچھا کہ کیا اے جی پی صدارتی ریفرنس سے خود کو الگ کر رہا ہے۔ 

یاد رہے کہ سابقہ حکمران جماعت تحریک انصاف کے بہت سے منحرف ارکان نے تحریک عدم اعتماد میں اپوزیشن کا ساتھ دیا تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں