آرمی چیف کی ن لیگی رہنما محمد زبیر سے ملاقات ہوئی، ڈی جی آئی ایس پی آر نے تصدیق کر دی

چیف آف آرمی اسٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے گذشتہ دو ماہ کے دوران مسلم لیگ (ن) کے رہنما محمد زبیر سے دو بار ملاقات کی۔ یہ بات ڈائریکٹر جنرل انٹر سروسز پبلک ریلیشنس میجر جنرل بابر افتخار نے بدھ کے روز بتائی۔

 ایک نجی نیوز چینل سے گفتگو کرتے ہوئے فوج کے ترجمان نے کہا کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز اس بحث کا حصہ ہیں۔ جنرل بابر افتخار نے بتایا کہ یہ ملاقاتیں ن لیگی رہنما زبیر کی درخواست پر کی گئیں۔ دونوں ملاقاتوں میں سے پہلی ملاقات اگست کے آخر میں ہوئی – جس میں آئی ایس آئی کے سربراہ لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید بھی موجود تھے جبکہ دوسری ملاقات 7 ستمبر کو ہوئی۔ 

آرمی چیف نے ملاقاتوں کے دوران واضح کیا کہ قانونی مسائل عدالتوں کے ذریعے حل ہوجائیں گے اور سیاسی مسائل پارلیمنٹ کو سنبھالنے چاہیں۔ ڈی جی آئی ایس پی آر نے بتایا کہ آرمی چیف نے کہا تھا کہ مسلح افواج کو ان مذاکرات سے دور رکھنا چاہئے۔

دوسری جانب ن لیگی رہنما محمد زبیر نے تصدیق کی کہ وہ آرمی چیف سے اگست کے آخر میں اور ستمبر کے دوران ملے تھے۔ ایک ٹویٹ میں ، انہوں نے آرمی چیف کو “ایک پرانا دوست” کہا اور بتایا کہ ان کے اہل خانہ ماضی میں رات کے کھانے پر بھی مل چکے تھے اور ان کی گفتگو زیادہ تر معیشت ، سیاست، نواز شریف اور مریم نواز کے گرد رہی ہے۔

انہوں نے واضح کیا کہ میں نے ان سے پہلی بات یہ کی تھی کہ میں اپنے ، پارٹی ، مریم یا نواز شریف کے لئے ریلیف نہیں مانگ رہا ہوں۔ زبیر نے بتایا کہ جنرل باجوہ سے ان کی دیرینہ رفاقت ہے اور اس طرح کی ملاقاتوں کو خفیہ رکھا جاتا ہے۔

نجی ٹی وی چینل کے شو میں بات کرتے ہوئے زبیر نے دعوی کیا کہ ڈی جی آئی ایس آئی پہلی ملاقات میں موجود نہیں تھے لیکن وہ ان اور آرمی چیف کے مابین دوسری ملاقات کا حصہ تھے۔ انہوں نے کہا کہ جب میٹنگ قریب پہنچی تو لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید اٹھ کھڑے ہوئے اور ان سے پوچھا “آپ کیا پوچھ رہے ہیں؟” جس پر  انہوں نے یہ کہتے ہوئے جواب دیا کہ وہ کچھ نہیں مانگ رہے ہیں۔ 

 مسلم لیگ (ن) کے رہنما نے کہا کہ وہ پچھلے 40 سالوں سے اپنے اسکول اور کالج کے دنوں سے ہی آرمی چیف کو جانتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ دونوں کے مابین “ذاتی اور معاشرتی” ملاقات تھی جس کی وجہ سے انہوں نے مریم نواز یا نواز شریف کو یہ بتانے کی زحمت گوارا نہیں کی کہ وہ آرمی چیف سے ملے ہیں۔

محمد زبیر نے کہا کہ وہ سویلین کی بالادستی پر یقین رکھتے ہیں اور اس بات پر فوج کو سیاسی معاملات میں شامل نہیں ہونا چاہئے اور نہ ہی فوج کو ان میں شامل ہونا چاہئے۔ 

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *