آئی ایم ایف شرائط کے تحت حکومت کو پیٹرول اور ڈیزل کی قیمت میں اضافہ کرنا ہو گا، زرائع

پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں فی لیٹر اضافہ کرنا پڑے گا

حکومت کو آئی ایم ایف پروگرام کو بحال کرنے کے لیے پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں بالترتیب 23 روپے اور 55 روپے فی لیٹر اضافہ کرنا پڑے گا۔ 

سبسڈی کو مکمل طور پر ختم کرنے کی توقع

 باخبر ذرائع نے بتایا کہ پچھلے پندرہ دن کے دوران پٹرول اور ڈیزل کے لئے فی لیٹر 30 روپے کے دو دفعہ مسلسل اضافے کے بعد، حکومت کی جانب سے نئے مالی سال کے آغاز سے قبل پی او ایل مصنوعات پر سبسڈی کو مکمل طور پر ختم کرنے کی توقع ہے۔ 

بین الاقوامی مارکیٹ میں تیل کی موجودہ قیمت کے پیش نظر پیٹرول پر 23 روپے اور ڈیزل پر 55 روپے سبسڈی دی جارہی ہے۔

 حتمی حساب اوگرا اگلے ہفتے کرے گا جب وہ تیل کی نئی قیمتوں کے لیے اپنی سفارشات وزیراعظم کو بھیجے گا۔ 

تیل کی قیمتوں میں حالیہ دو بڑے اضافوں کے بعد — پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 60 روپے فی لیٹر اضافہ — اور مالی سال 2022-23 کے لئے آئی ایم ایف کے منظور شدہ بجٹ کی پیش کش کے بعد، عام طور پر یہ خیال کیا جاتا ہے کہ بحالی کے لئے تمام پیشگی شرائط آئی ایم ایف کے پروگرام کی تکمیل ہو چکی ہے اور اب فنڈ کسی بھی وقت گرین سگنل دے گا۔ لیکن، ایسا نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں | روس پاکستان کو سستا تیل دینے کے لئے تیار ہو گیا

یہ بھی پڑھیں | وفاقی بجٹ 2022-23 پیش کر دیا گیا، جانئے اہم نکات

کہا جاتا ہے کہ ایک بڑی رکاوٹ نئے مالی سال کے آغاز سے قبل تیل کی سبسڈی کی مکمل واپسی ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ آخری اضافے کے بعد پیٹرول پر 9 روپے اور ڈیزل پر 23 روپے فی لیٹر سبسڈی دی گئی ہے۔ اب بین الاقوامی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے سبسڈی بڑھ گئی ہے۔

 یہ شہباز شریف کی قیادت والی مخلوط حکومت کے لیے واقعی مشکل وقت ہیں کیونکہ عام طور پر یہ سمجھا جاتا ہے کہ مشکل فیصلے پہلے ہی لیے جا چکے ہیں یعنی پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 60 روپے فی لیٹر اضافہ۔ لیکن، ابھی مزید چیلنج باقی ہیں جہاں حکومت کو رواں مالی سال کے اختتام سے قبل پیٹرول کی قیمت میں 23 روپے فی لیٹر اور ڈیزل کی قیمت میں 55 روپے فی لیٹر اضافہ کرنا پڑے گا۔

آئی ایم ایف کوئی نرمی نہیں دکھا رہا

تیل کی سبسڈی ختم کیے بغیر آئی ایم ایف کوئی نرمی نہیں دکھا رہا ہے۔

اس وقت پاکستان کو ایک نازک معاشی صورتحال کا سامنا ہے جہاں اس کے پاس آئی ایم ایف پروگرام کے علاوہ کوئی آپشن نہیں ہے۔

 عمران خان کی حکومت کا پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں کو بھاری سبسڈی کے ذریعے کم کرنے کا فیصلہ پی ٹی آئی حکومت کے آئی ایم ایف کے ساتھ کیے گئے معاہدے کی بڑی خلاف ورزی تھی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں